سنن ابو داؤد - جنازوں کا بیان - 3081
حدیث نمبر: 3089
حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مُحَمَّدٍ النُّفَيْلِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ إِسْحَاق، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي رَجُلٌ مِنْ أَهْلِ الشَّامِ يُقَالُ لَهُ أَبُو مَنْظُورٍ،‏‏‏‏عَنْ عَمِّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنِي عَمِّي، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَامِرٍ الرَّامِ أَخِي الْخَضِرِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو دَاوُد، ‏‏‏‏‏‏قَالَ النُّفَيْلِيُّ:‏‏‏‏ هُوَ الْخَضِرُ، ‏‏‏‏‏‏وَلَكِنْ كَذَا قَالَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنِّي لَبِبِلَادِنَا إِذْ رُفِعَتْ لَنَا رَايَاتٌ وَأَلْوِيَةٌ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ مَا هَذَا ؟ قَالُوا:‏‏‏‏ هَذَا لِوَاءُ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُهُ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ تَحْتَ شَجَرَةٍ قَدْ بُسِطَ لَهُ كِسَاءٌ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ جَالِسٌ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدِ اجْتَمَعَ إِلَيْهِ أَصْحَابُهُ، ‏‏‏‏‏‏فَجَلَسْتُ إِلَيْهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَذَكَرَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْأَسْقَامَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ الْمُؤْمِنَ إِذَا أَصَابَهُ السَّقَمُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَعْفَاهُ اللَّهُ مِنْهُ، ‏‏‏‏‏‏كَانَ كَفَّارَةً لِمَا مَضَى مِنْ ذُنُوبِهِ، ‏‏‏‏‏‏وَمَوْعِظَةً لَهُ فِيمَا يَسْتَقْبِلُ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّ الْمُنَافِقَ إِذَا مَرِضَ ثُمَّ أُعْفِيَ كَانَ كَالْبَعِيرِ، ‏‏‏‏‏‏عَقَلَهُ أَهْلُهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَرْسَلُوهُ فَلَمْ يَدْرِ لِمَ عَقَلُوهُ، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ يَدْرِ لِمَ أَرْسَلُوهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَجُلٌ مِمَّنْ حَوْلَهُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَمَا الْأَسْقَامُ ؟ وَاللَّهِ مَا مَرِضْتُ قَطُّ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ قُمْ عَنَّا، ‏‏‏‏‏‏فَلَسْتَ مِنَّا، ‏‏‏‏‏‏فَبَيْنَا نَحْنُ عِنْدَهُ إِذْ أَقْبَلَ رَجُلٌ عَلَيْهِ كِسَاءٌ، ‏‏‏‏‏‏وَفِي يَدِهِ شَيْءٌ قَدِ الْتَفَّ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏إِنِّي لَمَّا رَأَيْتُكَ أَقْبَلْتُ إِلَيْكَ، ‏‏‏‏‏‏فَمَرَرْتُ بِغَيْضَةِ شَجَرٍ، ‏‏‏‏‏‏فَسَمِعْتُ فِيهَا أَصْوَاتَ فِرَاخِ طَائِرٍ، ‏‏‏‏‏‏فَأَخَذْتُهُنَّ فَوَضَعْتُهُنَّ فِي كِسَائِي، ‏‏‏‏‏‏فَجَاءَتْ أُمُّهُنَّ فَاسْتَدَارَتْ عَلَى رَأْسِي، ‏‏‏‏‏‏فَكَشَفْتُ لَهَا عَنْهُنَّ فَوَقَعَتْ عَلَيْهِنَّ مَعَهُنَّ، ‏‏‏‏‏‏فَلَفَفْتُهُنَّ بِكِسَائِي، ‏‏‏‏‏‏فَهُنَّ أُولَاءِ مَعِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ ضَعْهُنَّ عَنْكَ، ‏‏‏‏‏‏فَوَضَعْتُهُنَّ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبَتْ أُمُّهُنَّ إِلَّا لُزُومَهُنَّ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لِأَصْحَابِهِ:‏‏‏‏ أَتَعْجَبُونَ لِرُحْمِ أُمِّ الْأَفْرَاخِ فِرَاخَهَا ؟ قَالُوا:‏‏‏‏ نَعَمْ يَا رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَوَالَّذِي بَعَثَنِي بِالْحَقِّ، ‏‏‏‏‏‏لَلَّهُ أَرْحَمُ بِعِبَادِهِ مِنْ أُمِّ الْأَفْرَاخِ بِفِرَاخِهَا، ‏‏‏‏‏‏ارْجِعْ بِهِنَّ حَتَّى تَضَعَهُنَّ مِنْ حَيْثُ أَخَذْتَهُنَّ، ‏‏‏‏‏‏وَأُمُّهُنَّ مَعَهُنَّ، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعَ بِهِنَّ.
خضر کے تیر انداز بھائی عامر (رض) کہتے ہیں کہ میں اپنے ملک میں تھا کہ یکایک ہمارے لیے جھنڈے اور پرچم لہرائے گئے تو میں نے پوچھا : یہ کیا ہے ؟ لوگوں نے بتایا کہ یہ رسول اللہ کا پرچم ہے، تو میں آپ کے پاس آیا، آپ ایک درخت کے نیچے ایک کمبل پر جو آپ کے لیے بچھایا گیا تھا تشریف فرما تھے، اور آپ کے اردگرد آپ کے اصحاب اکٹھا تھے، میں بھی جا کر انہیں میں بیٹھ گیا ١ ؎، پھر رسول اللہ نے بیماریوں کا ذکر فرمایا : جب مومن بیمار پڑتا ہے پھر اللہ تعالیٰ اس کو اس کی بیماری سے عافیت بخشتا ہے تو وہ بیماری اس کے پچھلے گناہوں کا کفارہ ہوجاتی ہے اور آئندہ کے لیے نصیحت، اور جب منافق بیمار پڑتا ہے پھر اسے عافیت دے دی جاتی ہے تو وہ اس اونٹ کے مانند ہے جسے اس کے مالک نے باندھ رکھا ہو پھر اسے چھوڑ دیا ہو، اسے یہ نہیں معلوم کہ اسے کس لیے باندھا گیا اور کیوں چھوڑ دیا گیا ۔ آپ کے اردگرد موجود لوگوں میں سے ایک شخص نے آپ سے عرض کیا : اللہ کے رسول ! بیماریاں کیا ہیں ؟ اللہ کی قسم میں کبھی بیمار نہیں ہوا تو رسول اللہ نے فرمایا : تو اٹھ جا، تو ہم میں سے نہیں ہے ٢ ؎۔ عامر کہتے ہیں : ہم لوگ بیٹھے ہی تھے کہ ایک کمبل پوش شخص آیا جس کے ہاتھ میں کوئی چیز تھی جس پر کمبل لپیٹے ہوئے تھا، اس نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! جب میں نے آپ کو دیکھا تو آپ کی طرف آ نکلا، راستے میں درختوں کا ایک جھنڈ دیکھا اور وہاں چڑیا کے بچوں کی آواز سنی تو انہیں پکڑ کر اپنے کمبل میں رکھ لیا، اتنے میں ان بچوں کی ماں آگئی، اور وہ میرے سر پر منڈلانے لگی، میں نے اس کے لیے ان بچوں سے کمبل ہٹا دیا تو وہ بھی ان بچوں پر آ گری، میں نے ان سب کو اپنے کمبل میں لپیٹ لیا، اور وہ سب میرے ساتھ ہیں، آپ نے فرمایا : ان کو یہاں رکھو ، میں نے انہیں رکھ دیا، لیکن ماں نے اپنے بچوں کا ساتھ نہیں چھوڑا، تب رسول اللہ نے اپنے اصحاب سے فرمایا : کیا تم اس چڑیا کے اپنے بچوں کے ساتھ محبت کرنے پر تعجب کرتے ہو ؟ ، صحابہ نے عرض کیا : ہاں، اللہ کے رسول ! آپ نے فرمایا : قسم ہے اس ذات کی جس نے مجھے سچا پیغمبر بنا کر بھیجا ہے، اللہ تعالیٰ اپنے بندوں سے اس سے کہیں زیادہ محبت رکھتا ہے جتنی یہ چڑیا اپنے بچوں سے رکھتی ہے، تم انہیں ان کی ماں کے ساتھ لے جاؤ اور وہیں چھوڑ آؤ جہاں سے انہیں لائے ہو ، تو وہ شخص انہیں واپس چھوڑ آیا۔
تخریج دارالدعوہ : تفرد بہ أبو داود، (تحفة الأشراف : ٥٠٥٦) (ضعیف) (اس کے راوی ابو منظور شامی مجہول ہیں )
وضاحت : ١ ؎ : یعنی میں بھی ان کے حلقے میں شریک ہوگیا، تاکہ آپ کا وعظ اور آپ کی نصیحت سنوں اور دیکھوں کہ آپ کیا فرماتے ہیں۔ ٢ ؎ : آپ نے یہ تہدیدا فرمایا، یعنی مومن پر کوئی نہ کوئی مصیبت ضرور آتی ہے، تاکہ آخرت میں اس کے گناہوں کا کفارہ ہو، اس کے برخلاف کافروں کو اکثر دنیا میں راحت رہتی ہے، تاکہ آخرت میں ان کا کوئی حصہ نہ رہے، جو کچھ انہیں ملنا ہے دنیا ہی میں مل جائے۔
Narrated Amir ar-Ram (RA) : We were in our country when flags and banners were raised. I said: What is this? The (the people) said: This is the banner of the Messenger of Allah . So I came to him. He was (sitting) under a tree. A sheet of cloth was spread for him and he was sitting on it. His Companions were gathered around him. I sat with them. The Messenger of Allah mentioned illness and said: When a believer is afflicted by illness and Allah cures him of it, it serves as an atonement for his previous sins and a warning to him for the future. But when a hypocrite becomes ill and is then cured, he is like a camel which has been tethered and then let loose by its owners, but does not know why they tethered it and why they let it loose. A man from among those around him asked: Messenger of Allah, what are illnesses? I swear by Allah, I never fell ill. The Messenger of Allah said: Get up and leave us. You do not belong to our number. When we were with him, a man came to him. He had a sheet of cloth and something in his hand. He turned his attention to him and said: Messenger of Allah, when I saw you, I turned towards you. I saw a group of trees and heard the sound of fledglings. I took them and put them in my garment. Their mother then came and began to hover round my head. I showed them to her, and she fell on them. I wrapped them with my garment. They are now with me. He said: Put them away from you. So I put them away, but their mother stayed with them. The Messenger of Allah said to his companions: Are you surprised at the affection of the mother for her young? They said: Yes, Messenger of Allah. He said: I swear by Him Who has sent me with the Truth, Allah is more affectionate to His servants than a mother to her young ones. Take them back put them and where you took them from when their mother should have been with them. So he took them back.
Top