سنن ابو داؤد - طب کا بیان - 3841
حدیث نمبر: 3855
حَدَّثَنَا حَفْصُ بْنُ عُمَرَ النَّمَرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا شُعْبَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ زِيَادِ بْنِ عِلَاقَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أُسَامَةَ بْنِ شَرِيكٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَتَيْتُ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَأَصْحَابَهُ كَأَنَّمَا عَلَى رُءُوسِهِمُ الطَّيْرُ، ‏‏‏‏‏‏فَسَلَّمْتُ ثُمَّ قَعَدْتُ، ‏‏‏‏‏‏فَجَاءَ الْأَعْرَابُ مِنْ هَا هُنَا وَهَهُنَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالُوا:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَتَدَاوَى ؟، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ تَدَاوَوْا، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّ اللَّهَ عَزَّ وَجَلَّ لَمْ يَضَعْ دَاءً إِلَّا وَضَعَ لَهُ دَوَاءً غَيْرَ دَاءٍ وَاحِدٍ الْهَرَمُ.
اسامہ بن شریک (رض) کہتے ہیں کہ میں نبی اکرم کے پاس آیا آپ کے اصحاب اس طرح (بیٹھے) تھے گویا ان کے سروں پر پرندے بیٹھے ہیں، تو میں نے سلام کیا پھر میں بیٹھ گیا، اتنے میں ادھر ادھر سے کچھ دیہاتی آئے اور انہوں نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! کیا ہم دوا کریں ؟ آپ نے فرمایا : دوا کرو اس لیے کہ اللہ نے کوئی بیماری ایسی نہیں پیدا کی ہے جس کی دوا نہ پیدا کی ہو، سوائے ایک بیماری کے اور وہ بڑھاپا ہے ۔
تخریج دارالدعوہ : * تخريج : سنن النسائی/الکبری الطب، ٤٣ (٧٥٥٣) ، سنن الترمذی/الطب ٢ (٢٠٣٨) ، سنن ابن ماجہ/الطب ١ (٣٤٣٦) ، (تحفة الأشراف : ١٢٧) ، وقد أخرجہ : مسند احمد (٤/٢٧٨) (صحیح )
Narrated Usamah ibn Sharik: I came to the Prophet and his Companions were sitting as if they had birds on their heads. I saluted and sat down. The desert Arabs then came from here and there. They asked: Messenger of Allah, should we make use of medical treatment? He replied: Make use of medical treatment, for Allah has not made a disease without appointing a remedy for it, with the exception of one disease, namely old age.
Top