صحيح البخاری - بیع سلم کا بیان ۔ - 2148
حدیث نمبر: 2239
حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ زُرَارَةَ ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا إِسْمَاعِيلُ بْنُ عُلَيَّةَ ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا ابْنُ أَبِي نَجِيحٍ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ كَثِيرٍ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي الْمِنْهَالِ ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُمَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَدِمَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْمَدِينَةَ وَالنَّاسُ يُسْلِفُونَ فِي الثَّمَرِ الْعَامَ وَالْعَامَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ قَالَ:‏‏‏‏ عَامَيْنِ أَوْ ثَلَاثَةً، ‏‏‏‏‏‏شَكَّ إِسْمَاعِيلُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَنْ سَلَّفَ فِي تَمْرٍ، ‏‏‏‏‏‏فَلْيُسْلِفْ فِي كَيْلٍ مَعْلُومٍ وَوَزْنٍ مَعْلُومٍ.
ہم سے عمرو بن زرارہ نے بیان کیا، کہا کہ ہم کو اسماعیل بن علیہ نے خبر دی، انہیں ابن ابی نجیح نے خبر دی، انہیں عبداللہ بن کثیر نے، انہیں ابومنہال نے اور ان سے ابن عباس (رض) نے بیان کیا کہ جب نبی کریم مدینہ تشریف لائے تو (مدینہ کے) لوگ پھلوں میں ایک سال یا دو سال کے لیے بیع سلم کرتے تھے۔ یا انہوں نے یہ کہا کہ دو سال اور تین سال (کے لیے کرتے تھے) شک اسماعیل کو ہوا تھا۔ نبی کریم نے فرمایا کہ جو شخص بھی کھجور میں بیع سلم کرے، اسے مقررہ پیمانے یا مقررہ وزن کے ساتھ کرنی چاہیے۔
Narrated Ibn Abbas (RA): Allah's Apostle ﷺ came to Madinah and the people used to pay in advance the price of fruits to be delivered within one or two years. (The sub-narrator is in doubt whether it was one to two years or two to three years.) The Prophet ﷺ said, "Whoever pays money in advance for dates (to be delivered later) should pay it for known specified weight and measure (of the dates)." ________
Top