صحيح البخاری - جھگڑوں کا بیان ۔ - 2307
حدیث نمبر: 2410
حَدَّثَنَا أَبُو الْوَلِيدِ ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا شُعْبَةُ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ عَبْدُ الْمَلِكِ بْنُ مَيْسَرَةَ :‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ النَّزَّالَ بْنَ سَبْرَةَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُعَبْدَ اللَّهِ ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ رَجُلًا قَرَأَ آيَةً سَمِعْتُ مِنَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ خِلَافَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَأَخَذْتُ بِيَدِهِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ بِهِ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ كِلَاكُمَا مُحْسِنٌ. قَالَ شُعْبَةُ:‏‏‏‏ أَظُنُّهُ قَالَ:‏‏‏‏ لَا تَخْتَلِفُوا، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّ مَنْ كَانَ قَبْلَكُمُ اخْتَلَفُوا فَهَلَكُوا.
ہم سے ابوالولید نے بیان کیا، کہا کہ ہم سے شعبہ نے بیان کیا کہ عبدالملک بن میسرہ نے مجھے خبر دی کہا کہ میں نے نزال بن سمرہ سے سنا، اور انہوں نے عبداللہ بن مسعود (رض) سے سنا، انہوں نے کہا کہ میں نے ایک شخص کو قرآن کی آیت اس طرح پڑھتے سنا کہ رسول اللہ سے میں نے اس کے خلاف سنا تھا۔ اس لیے میں ان کا ہاتھ تھامے آپ کی خدمت میں لے گیا۔ آپ نے (میرا اعتراض سن کر) فرمایا کہ تم دونوں درست ہو۔ شعبہ نے بیان کیا کہ میں سمجھتا ہوں کہ آپ نے یہ بھی فرمایا کہ اختلاف نہ کرو، کیونکہ تم سے پہلے لوگ اختلاف ہی کی وجہ سے تباہ ہوگئے۔
Narrated ' Abdullah (RA): I heard a man reciting a verse (of the Holy Qur'an) but I had heard the Prophet ﷺ reciting it differently. So, I caught hold of the man by the hand and took him to Allah's Apostle ﷺ who said, "Both of you are right." Shu'ba, the sub-narrator said, "I think he said to them, "Don't differ, for the nations before you differed and perished (because of their differences). "
Top