سنن ابنِ ماجہ - اذان کا بیان - 707
حدیث نمبر: 707
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ خَالِدِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ الْوَاسِطِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبِي، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ إِسْحَاق، ‏‏‏‏‏‏عَنْ الزُّهْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَالِمٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ أَنَّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اسْتَشَارَ النَّاسَ لِمَا يُهِمُّهُمْ إِلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏فَذَكَرُوا الْبُوقَ، ‏‏‏‏‏‏فَكَرِهَهُ مِنْ أَجْلِ الْيَهُودِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ ذَكَرُوا النَّاقُوسَ، ‏‏‏‏‏‏فَكَرِهَهُ مِنْ أَجْلِ النَّصَارَى، ‏‏‏‏‏‏فَأُرِيَ النِّدَاءَ تِلْكَ اللَّيْلَةَ رَجُلٌ مِنَ الْأَنْصَارِ، ‏‏‏‏‏‏يُقَالُ لَهُ:‏‏‏‏ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ زَيْدٍ، ‏‏‏‏‏‏وَعُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ، ‏‏‏‏‏‏فَطَرَقَ الْأَنْصَارِيُّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لَيْلًا، ‏‏‏‏‏‏فَأَمَرَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِلَالًا بِهِ فَأَذَّنَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ الزُّهْرِيُّ:‏‏‏‏ وَزَادَ بِلَالٌ فِي نِدَاءِ صَلَاةِ الْغَدَاةِ، ‏‏‏‏‏‏الصَّلَاةُ خَيْرٌ مِنَ النَّوْمِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَقَرَّهَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ عُمَرُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ قَدْ رَأَيْتُ مِثْلَ الَّذِي رَأَى وَلَكِنَّهُ سَبَقَنِي.
عبداللہ بن عمر (رض) کہتے ہیں کہ نبی اکرم ﷺ نے لوگوں سے اس مسئلہ میں مشورہ کیا کہ نماز کے لیے لوگوں کو اکٹھا کرنے کی کیا صورت ہونی چاہیئے، کچھ صحابہ نے بگل کا ذکر کیا (کہ اسے نماز کے وقت بجا دیا جائے) تو آپ ﷺ نے اسے یہود سے مشابہت کے بنیاد پر ناپسند فرمایا، پھر کچھ نے ناقوس کا ذکر کیا لیکن آپ ﷺ نے اسے بھی نصاریٰ سے تشبیہ کی بناء پر ناپسند فرمایا، اسی رات ایک انصاری صحابی عبداللہ بن زید اور عمر بن خطاب (رض) کو خواب میں اذان دکھائی گئی، انصاری صحابی رات ہی میں رسول اللہ ﷺ کے پاس پہنچے، آپ ﷺ نے بلال (رض) کو اس کا حکم دیا تو انہوں نے اذان دی۔ زہری کہتے ہیں : بلال (رض) نے صبح کی اذان میں «الصلاة خير من النوم» نماز نیند سے بہتر ہے کا اضافہ کیا، تو رسول اللہ ﷺ نے اسے برقرار رکھا۔ عمر (رض) نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! میں نے بھی وہی خواب دیکھا ہے جو عبداللہ بن زید نے دیکھا ہے، لیکن وہ (آپ کے پاس پہنچنے میں) مجھ سے سبقت لے گئے۔
تخریج دارالدعوہ : تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف : ٦٨٦٦، ومصباح الزجاجة : ٢٦١) ، وقد أخرجہ : مسند احمد (٢/١٤٨) (ضعیف) (یہ روایت سنداً ضعیف ہے کیونکہ اس کی سند میں ایک روای محمد بن خالد ضعیف ہے، لیکن معنی کے اعتبار سے یہ حدیث صحیح ہے، کیونکہ بخاری و مسلم میں آئی ہوئی حدیث کے ہم معنی ہے )
It was narrated from Salim, from his father, that the Prophet ﷺ consulted the people as to how he could call them to the prayer. They suggested a horn, but he disliked that because of the Jews (because the Jews used a horn). Then they suggested a bell but he disliked that because of the Christians (because the Christians used a bell). Then that night the call to the prayer was shown in a dream to a man from among the Ansâr whose name was ‘Abdullâh bin Zaid, and to ‘Umar bin Khattáb. The Ansari man came to the Messenger of Allah ﷺ at night, and the Messenger of Allah ﷺ commanded Bilal (RA) to give the call to the prayer. (Da’if) Zuhri said: “Bildal added the phrase “As-salâtu khairum minannawm (the prayer is better than sleep)” to the call for the morning prayer, and the Messenger of Allah ﷺ approved of that.”‘Umar said: “O Messenger of Allah ﷺ , I saw the same as he did, but he beat me to it.”
Top