مؤطا امام مالک - مکاتب کے بیان میں - 1170
عَنْ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ عُمَرَ کَانَ يَقُولُ الْمُکَاتَبُ عَبْدٌ مَا بَقِيَ عَلَيْهِ مِنْ کِتَابَتِهِ شَيْئٌ عَنْ عُرْوَةَ بْنَ الزُّبَيْرِ وَسُلَيْمَانَ بْنَ يَسَارٍ کَانَا يَقُولَانِ الْمُکَاتَبُ عَبْدٌ مَا بَقِيَ عَلَيْهِ مِنْ کِتَابَتِهِ شَيْئٌ قَالَ مَالِک وَهُوَ رَأْيِي قَالَ مَالِک فَإِنْ هَلَکَ الْمُکَاتَبُ وَتَرَکَ مَالًا أَکْثَرَ مِمَّا بَقِيَ عَلَيْهِ مِنْ کِتَابَتِهِ وَلَهُ وَلَدٌ وُلِدُوا فِي کِتَابَتِهِ أَوْ کَاتَبَ عَلَيْهِمْ وَرِثُوا مَا بَقِيَ مِنْ الْمَالِ بَعْدَ قَضَائِ کِتَابَتِهِ
عبداللہ بن عمر کہتے تھے مکاتب غلام رہے گا جب تک اس پر کچھ بھی بدل کتابت میں سے باقی رہے۔ عروہ بن زبیر اور سلیمان بن یسار کہتے تھے مکاتب غلام ہے جب تک اس پر کچھ بھی بدل کتاب میں سے باقی ہے۔ کہا مالک نے میری رائے یہی ہے کہ اگر مکاتب اپنی بدل کتابت سے زیادہ مالک چھوڑ کر مرجائے اور اپنی اولاد کو جو حالت کتابت میں پیدا ہوئی تھی یا عقدکتابت میں داخل تھی چھوڑ جائے تو پہلے اس کے مالک میں سے بدل کتابت ادا کریں گے پھر جس قدر بچ رہے گا اس کی وارث مکاتب کی اولاد ہوگی۔
Top