مسند امام احمد - نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے ایک خادم کی روایت۔ - 15498
حَدَّثَنَا عَفَّانُ حَدَّثَنَا خَالِدٌ يَعْنِي الْوَاسِطِيَّ قَالَ حَدَّثَنَا عَمْرُو بْنُ يَحْيَى الْأَنْصَارِيُّ عَنْ زِيَادِ بْنِ أَبِي زِيَادٍ مَوْلَى بَنِي مَخْزُومٍ عَنْ خَادِمٍ لِلنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ رَجُلٍ أَوْ امْرَأَةٍ قَالَ كَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مِمَّا يَقُولُ لِلْخَادِمِ أَلَكَ حَاجَةٌ قَالَ حَتَّى كَانَ ذَاتَ يَوْمٍ فَقَالَ يَا رَسُولَ اللَّهِ حَاجَتِي قَالَ وَمَا حَاجَتُكَ قَالَ حَاجَتِي أَنْ تَشْفَعَ لِي يَوْمَ الْقِيَامَةِ قَالَ وَمَنْ دَلَّكَ عَلَى هَذَا قَالَ رَبِّي قَالَ إِمَّا لَا فَأَعِنِّي بِكَثْرَةِ السُّجُودِ
نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) کے ایک خادم صحابی جن کے مذکر یا مونث ہونے کی تعین میں راوی کو شک ہے سے مروی ہے کہ نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) اکثر خادم سے پوچھتے رہتے تھے کہ تمہیں کوئی ضرورت اور کام تو نہیں ہے ایک دن اسی طرح میں نے نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) سے عرض کیا یا رسول اللہ میرا ایک کام ہے نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے پوچھا کیا کام ہے میں نے عرض کیا کہ قیامت کے دن آپ میری سفارش کردیجیے نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا یہ خیال تمہیں کہاں سے آیا اس نے عرض کیا اللہ نے دل میں ڈال دیا نبی (صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم) نے فرمایا پھر کثرت سے سجود کے ذریعے میری مدد کرو۔
Top