سنن النسائی - عقیقہ سے متعلق احادیث مبارکہ - 4232
أَخْبَرَنَا أَحْمَدُ بْنُ سُلَيْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا أَبُو نُعَيْمٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا دَاوُدُ بْنُ قَيْسٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَمْرِو بْنِ شُعَيْبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْجَدِّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سُئِلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ عَنِ الْعَقِيقَةِ ؟، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ لَا يُحِبُّ اللَّهُ عَزَّ وَجَلَّ الْعُقُوقَ،‏‏‏‏ وَكَأَنَّهُ كَرِهَ الِاسْمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ لِرَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّمَا نَسْأَلُكَ أَحَدُنَا يُولَدُ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ مَنْ أَحَبَّ أَنْ يَنْسُكَ عَنْ وَلَدِهِ فَلْيَنْسُكْ عَنْهُ عَنَ الْغُلَامِ شَاتَانِ مُكَافَأَتَانِ، ‏‏‏‏‏‏وَعَنِ الْجَارِيَةِ شَاةٌ. قَالَ دَاوُدُ:‏‏‏‏ سَأَلْتُ زَيْدَ بْنَ أَسْلَمَ عَنِ الْمُكَافَأَتَانِ ؟، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ الشَّاتَانِ الْمُشَبَّهَتَانِ،‏‏‏‏ تُذْبَحَانِ جَمِيعًا.
عبداللہ بن عمرو (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ سے عقیقہ کے سلسلے میں پوچھا گیا تو آپ نے فرمایا : اللہ تعالیٰ عقوق کو پسند نہیں کرتا ۔ گویا کہ آپ کو یہ نام ناپسند تھا۔ لوگوں نے رسول اللہ سے عرض کیا : ہم تو آپ سے صرف یہ پوچھ رہے ہیں کہ جب ایک شخص کے یہاں اولاد پیدا ہو تو کیا کرے ؟ آپ نے فرمایا : جو اپنی اولاد کی طرف سے قربانی کرنا چاہے ١ ؎ کرے، لڑکے کی طرف سے ایک ہی عمر کی دو بکریاں اور لڑکی کی طرف سے ایک بکری ۔ داود بن قیس کہتے ہیں : میں نے زید بن اسلم سے «مكافئتان» کے بارے میں پوچھا تو انہوں نے کہا : دو مشابہ بکریاں جو ایک ساتھ ذبح کی جائیں ٢ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/الضحایا ٢١ (٢٨٤٢) ، (تحفة الأشراف : ٨٧٠٠) ، مسند احمد (٢/١٨٢، ١٨٣، ١٨٧، ١٩٣، ١٩٤) (حسن صحیح )
وضاحت : ١ ؎: اسی جملے سے استدلال کرتے ہوئے بعض ائمہ کہتے ہیں کہ عقیقہ فرض نہیں مندوب و مستحب ہے، جب کہ فرض قرار دینے والے حدیث نمبر ٤٢١٩ سے استدلال کرتے ہیں جس میں حکم ہے کہ بچے کی طرف سے خون بہاؤ نیز اور بھی کچھ الفاظ ایسے وارد ہیں جن سے عقیقہ کی فرضیت معلوم ہوتی ہے، إلا یہ کہ کسی کو عقیقہ کے وقت استطاعت نہ ہو تو بعد میں استطاعت ہونے پر قضاء کرلے۔ ٢ ؎: عمر میں برابر ہوں یا وصف میں ایک دوسرے سے قریب تر ہوں۔
قال الشيخ الألباني : حسن صحيح
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني : حديث نمبر 4212
It was narrated from 'Amr bin Shuaib, from his fahther, that his grandfather said: "The Messenger of Allah was asked about the 'Aqiqah and he said: "Allah, the mighty and sublime, does not like Al-Uquq' as if he disliked the word (Al-Aqiqah). He said to the Messenger of Allah ﷺ: 'But one of us may offer a sacrifice when a child is born to him.' He said: 'Whoever wants to offer a sacrifice for his child, let him do so, for a boy; two sheep, Mukafaatan, (of equal age), and for a girl, one.' (One of the narrators) Dawud said: 'I asked Ziad bin Aslam about the word Mukafaatan and he said: 'Two similar sheep that are slaughtered together.
Top