سنن الترمذی - حدود کا بیان - 1460
حدیث نمبر: 1423
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى الْقُطَعِيُّ الْبَصْرِيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا بِشْرُ بْنُ عُمَرَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هَمَّامٌ،‏‏‏‏ عَنْ قَتَادَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَسَنِ الْبَصْرِيِّ،‏‏‏‏ عَنْعَلِيٍّ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ رُفِعَ الْقَلَمُ عَنْ ثَلَاثَةٍ:‏‏‏‏ عَنِ النَّائِمِ حَتَّى يَسْتَيْقِظَ،‏‏‏‏ وَعَنِ الصَّبِيِّ حَتَّى يَشِبَّ،‏‏‏‏ وَعَنِ الْمَعْتُوهِ حَتَّى يَعْقِلَ . قَالَ:‏‏‏‏ وَفِي الْبَاب،‏‏‏‏ عَنْ عَائِشَةَ. قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ حَدِيثُ عَلِيٍّ حَدِيثٌ حَسَنٌ غَرِيبٌ مِنْ هَذَا الْوَجْهِ،‏‏‏‏ وَقَدْ رُوِيَ مِنْ غَيْرِ وَجْهٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏وَذَكَرَ بَعْضُهُمْ:‏‏‏‏ وَعَنِ الْغُلَامِ حَتَّى يَحْتَلِمَ،‏‏‏‏ وَلَا نَعْرِفُ لِلْحَسَنِ سَمَاعًا مِنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ،‏‏‏‏ وَقَدْ رُوِيَ هَذَا الْحَدِيثُ عَنْ عَطَاءِ بْنِ السَّائِبِ،‏‏‏‏ عَنْأَبِي ظَبْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ،‏‏‏‏ عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ نَحْوَ هَذَا الْحَدِيثِ،‏‏‏‏ وَرَوَاهُ الْأَعْمَشُ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي ظَبْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ،‏‏‏‏ عَنْ عَلِيٍّ،‏‏‏‏ مَوْقُوفًا وَلَمْ يَرْفَعْهُ،‏‏‏‏ وَالْعَمَلُ عَلَى هَذَا الْحَدِيثِ عِنْدَ أَهْلِ الْعِلْمِ،‏‏‏‏ قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ قَدْ كَانَ الْحَسَنُ فِي زَمَانِ عَلِيٍّ وَقَدْ أَدْرَكَهُ،‏‏‏‏ وَلَكِنَّا لَا نَعْرِفُ لَهُ سَمَاعًا مِنْهُ،‏‏‏‏ وَأَبُو ظَبْيَانَ اسْمُهُ:‏‏‏‏ حُصَيْنُ بْنُ جُنْدَبٍ.
علی (رض) سے روایت ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا : تین طرح کے لوگ مرفوع القلم ہیں (یعنی قابل مواخذہ نہیں ہیں) : سونے والا جب تک کہ نیند سے بیدار نہ ہوجائے، بچہ جب تک کہ بالغ نہ ہوجائے، اور دیوانہ جب تک کہ سمجھ بوجھ والا نہ ہوجائے ۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - اس سند سے علی (رض) کی حدیث حسن غریب ہے، ٢ - یہ حدیث کئی اور سندوں سے بھی علی (رض) سے مروی ہے، وہ نبی اکرم سے روایت کرتے ہیں، ٣ - بعض راویوں نے «وعن الغلام حتی يحتلم» کہا ہے، یعنی بچہ جب تک بالغ نہ ہوجائے مرفوع القلم ہے، ٤ - علی (رض) کے زمانے میں حسن بصری موجود تھے، حسن نے ان کا زمانہ پایا ہے، لیکن علی (رض) سے ان کے سماع کا ہمیں علم نہیں ہے، ٥ - یہ حدیث : عطاء بن سائب سے بھی مروی ہے انہوں نے یہ حدیث بطریق : «أبي ظبيان عن علي بن أبي طالب عن النبي صلی اللہ عليه وسلم» اسی جیسی حدیث روایت کی ہے، اور اعمش نے بطریق : «أبي ظبيان عن ابن عباس عن علي» موقوفاً روایت کیا ہے، انہوں نے اسے مرفوع نہیں کیا، ٦ - اس باب میں عائشہ (رض) سے بھی روایت ہے، ٧ - اہل علم کا عمل اسی حدیث پر ہے۔
تخریج دارالدعوہ : تفرد بہ المؤلف (أخرجہ النسائي في الکبریٰ ) (تحفة الأشراف : ١٠٠٩٧) ، وراجع : سنن ابی داود/ الحدود ١٦ (٤٣٩٩- ٤٤٠٣) ، سنن ابن ماجہ/الطلاق ١٥ (٢٠٤٢) ، و مسند احمد (١/١١٦، ١٤٠، ٩٥٥، ١٥٨) (صحیح) (شواہد ومتابعات کی بنا پر یہ صحیح ہے، ورنہ حسن بصری مدلس ہیں اور روایت عنعنہ سے ہے، نیز ان کا سماع بھی علی (رض) سے نہیں ہے اور دیگر طرق بھی کلام سے خالی نہیں ہیں، دیکھئے : الإرواء رقم ٢٩٧ )
قال الشيخ الألباني : صحيح، ابن ماجة (2041 - 2042)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 1423
Sayyidina Ali reported that Allah’s Messenger ﷺ said, “The pen is raised concerning three: one who is asleep till he awakes, a child till he attains puberty and an insane person till he regains senses” This means that they are not bound by the commands of Shari’ah.[Abu Dawud 4402, Ahmed 1327]
Top