سنن الترمذی - حدیث کی علتوں اور راویوں کا بیان - 4163
حدیث نمبر: 3956
حَدَّثَنَا هَارُونُ بْنُ مُوسَى بْنِ أَبِي عَلْقَمَةَ الْفَرْوِيُّ الْمَدَنِيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنِي أَبِي، عَنْ هِشَامِ بْنِ سَعْدٍ، عَنْ سَعِيدِ بْنِ أَبِي سَعِيدٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ قَدْ أَذْهَبَ اللَّهُ عَنْكُمْ عُبِّيَّةَ الْجَاهِلِيَّةِ وَفَخْرَهَا بِالْآبَاءِ، ‏‏‏‏‏‏مُؤْمِنٌ تَقِيٌّ، ‏‏‏‏‏‏وَفَاجِرٌ شَقِيٌّ، ‏‏‏‏‏‏وَالنَّاسُ بَنُو آدَمَ،‏‏‏‏ وَآدَمُ مِنْ تُرَابٍ . قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَهَذَا أَصَحُّ عِنْدَنَا مِنَ الْحَدِيثِ الْأَوَّلِ، ‏‏‏‏‏‏وَسَعِيدٌ الْمَقْبُرِيُّ قَدْ سَمِعَ أَبَا هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَيَرْوِي عَنْ أَبِيهِ أَشْيَاءَ كَثِيرَةً، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ رَوَى سُفْيَانُ الثَّوْرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏وَغَيْرُ وَاحِدٍ، ‏‏‏‏‏‏هَذَا الْحَدِيثَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ هِشَامِ بْنِ سَعْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدٍ الْمَقْبُرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏نَحْوَ حَدِيثِ أَبِي عَامِرٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ هِشَامِ بْنِ سَعْدٍ.
ابوہریرہ (رض) سے روایت ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا : اللہ نے تم سے جاہلیت کی نخوت اور اپنے باپ دادا پر فخر کو ختم کردیا ہے، اب لوگ مومن و متقی ہیں یا فاجر و بدبخت اور سارے لوگ آدم کی اولاد ہیں اور آدم مٹی سے بنائے گئے ہیں ۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١- یہ حدیث حسن اور یہ ہمارے نزدیک پہلی روایت سے زیادہ صحیح ہے، ٢- سعید مقبری نے ابوہریرہ (رض) سے سنا ہے اور وہ اپنے باپ کے واسطے سے بہت سی چیزیں ابوہریرہ سے روایت کرتے ہیں، ٣- سفیان ثوری اور کئی دوسرے راویوں نے یہ حدیث ہشام بن سعد سے، ہشام نے سعید مقبری سے اور سعید مقبری نے ابوہریرہ (رض) کے واسطہ سے نبی اکرم سے ابوعامر کی حدیث کے مانند روایت کی ہے جسے وہ ہشام بن سعد سے روایت کرتے ہیں۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الأدب ١٢٠ (٥١١٦) (تحفة الأشراف : ١٤٣٣٣) (حسن)
قال الشيخ الألباني : حسن انظر ما قبله (3955)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 3956
Sayyidina Abu Hurayrah (RA) reported that Allah’s Messenger ﷺ said, “Indeed, Allah has removed from you the arrogance of pre-Islamic’s days and its boasing on ancestry (There is now) a pious believer or a miserable sinner. And mankind is children of Aadam and Aadam was (created) from dust.” [Abu Dawud 5116]--------------------------------------------------------------------------------
Top