سنن الترمذی - زکوۃ کا بیان - 599
حدیث نمبر: 617
حَدَّثَنَا هَنَّادُ بْنُ السَّرِيِّ التَّمِيمِيُّ الْكُوفِيُّ، حَدَّثَنَا أَبُو مُعَاوِيَةَ، عَنْ الْأَعْمَشِ، عَنْ الْمَعْرُورِ بْنِ سُوَيْدٍ، عَنْ أَبِي ذَرٍّ، قَالَ:‏‏‏‏ جِئْتُ إِلَى رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَهُوَ جَالِسٌ فِي ظِلِّ الْكَعْبَةِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَرَآنِي مُقْبِلًا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ هُمُ الْأَخْسَرُونَ وَرَبِّ الْكَعْبَةِ يَوْمَ الْقِيَامَةِ قَالَ:‏‏‏‏ فَقُلْتُ:‏‏‏‏ مَا لِي لَعَلَّهُ أُنْزِلَ فِيَّ شَيْءٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ مَنْ هُمْ فِدَاكَ أَبِي وَأُمِّي، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ هُمُ الْأَكْثَرُونَ إِلَّا مَنْ قَالَ:‏‏‏‏ هَكَذَا وَهَكَذَا وَهَكَذَا ، ‏‏‏‏‏‏فَحَثَا بَيْنَ يَدَيْهِ وَعَنْ يَمِينِهِ وَعَنْ شِمَالِهِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ وَالَّذِي نَفْسِي بِيَدِهِ، ‏‏‏‏‏‏لَا يَمُوتُ رَجُلٌ فَيَدَعُ إِبِلًا أَوْ بَقَرًا لَمْ يُؤَدِّ زَكَاتَهَا، ‏‏‏‏‏‏إِلَّا جَاءَتْهُ يَوْمَ الْقِيَامَةِ أَعْظَمَ مَا كَانَتْ وَأَسْمَنَهُ، ‏‏‏‏‏‏تَطَؤُهُ بِأَخْفَافِهَا وَتَنْطَحُهُ بِقُرُونِهَا، ‏‏‏‏‏‏كُلَّمَا نَفِدَتْ أُخْرَاهَا عَادَتْ عَلَيْهِ أُولَاهَا حَتَّى يُقْضَى بَيْنَ النَّاسِ . وَفِي الْبَاب عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ مِثْلُهُ، ‏‏‏‏‏‏وَعَنْ عَلِيِّ بْنِ أَبِي طَالِبٍ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ:‏‏‏‏ لُعِنَ مَانِعُ الصَّدَقَةِ وَعَنْ قَبِيصَةَ بْنِ هُلْبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ وَجَابِرِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَسْعُودٍ. قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ حَدِيثُ أَبِي ذَرٍّ حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ، ‏‏‏‏‏‏وَاسْمُ أَبِي ذَرٍّ جُنْدَبُ بْنُ السَّكَنِ وَيُقَالُ ابْنُ جُنَادَةَ
ابوذر (رض) کہتے ہیں کہ میں رسول اللہ کے پاس آیا، آپ کعبہ کے سائے میں بیٹھے تھے آپ نے مجھے آتا دیکھا تو فرمایا : رب کعبہ کی قسم ! قیامت کے دن یہی لوگ خسارے میں ہوں گے ٢ ؎ میں نے اپنے جی میں کہا : شاید کوئی چیز میرے بارے میں نازل کی گئی ہو۔ میں نے عرض کیا : کون لوگ ؟ میرے ماں باپ آپ پر قربان ہوں ؟ تو رسول اللہ نے فرمایا : یہی لوگ جو بہت مال والے ہیں سوائے ان لوگوں کے جو ایسا ایسا کرے، آپ نے اپنے دونوں ہاتھ سے لپ بھر کر اپنے سامنے اور اپنے دائیں اور اپنے بائیں طرف اشارہ کیا، پھر فرمایا : قسم ہے اس ذات کی جس کے ہاتھ میں میری جان ہے، جو بھی آدمی اونٹ اور گائے چھوڑ کر مرا اور اس نے اس کی زکاۃ ادا نہیں کی تو قیامت کے دن وہ اس سے زیادہ بھاری اور موٹے ہو کر آئیں گے جتنا وہ تھے ٣ ؎ اور اسے اپنی کھروں سے روندیں گے، اور اپنی سینگوں سے ماریں گے، جب ان کا آخری جانور بھی گزر چکے گا تو پھر پہلا لوٹا دیا جائے گا ٤ ؎ یہاں تک کہ لوگوں کے درمیان فیصلہ کردیا جائے۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١- ابوذر (رض) کی حدیث حسن صحیح ہے، ٢- اس باب میں ابوہریرہ (رض) سے بھی اسی کے مثل روایت ہے، ٣- علی (رض) سے مروی ہے کہ زکاۃ روک لینے والے پر لعنت کی گئی ہے ٥ ؎، ٤- ( یہ حدیث) قبیصہ بن ہلب نے اپنے والد ہلب سے روایت کی ہے، نیز جابر بن عبداللہ اور عبداللہ بن مسعود (رض) سے بھی احادیث آئی ہیں۔
Sayyidina Abu Dharr (RA) narrated saying I came to AlIahs Messenger ﷺ while he was sitting in the shade of the Ka’hah. He saw me coming and said. ‘They are the losers on the Day of Resurrection, by the Lord of the Kahah I thought perhaps something was revealed concerning me. So, I asked, ‘Who are they-may my parents be ransomed to you!” He said, “They are the wealthy except those who spend here and there”. Then, he scooped his hands and gestured to his front, right and left, and said, ‘By Him, in Whose Hand is my soul, no man dies leaving a camel or a cow against whom he has not paid zakah hut the same animal will come mightier and fatter than what it is and crush him under its hooves and pas away striking him with its horns Every time the second will pass away, the first animal will come back, till people have finished their reckoning’. [Ahmed21409, Bukhari 775, Muslim 990, Nisai 2439. Ibn e Majah 1785]
Top