سنن الترمذی - شکار کا بیان - 1506
حدیث نمبر: 1465
حَدَّثَنَا مَحْمُودُ بْنُ غَيْلَانَ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا قَبِيصَةُ،‏‏‏‏ عَنْ سُفْيَانَ،‏‏‏‏ عَنْ مَنْصُورٍ،‏‏‏‏ عَنْ إِبْرَاهِيمَ،‏‏‏‏ عَنْ هَمَّامِ بْنِ الْحَارِثِ،‏‏‏‏ عَنْ عَدِيِّ بْنِ حَاتِمٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنَّا نُرْسِلُ كِلَابًا لَنَا مُعَلَّمَةً،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كُلْ مَا أَمْسَكْنَ عَلَيْكَ ،‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ وَإِنْ قَتَلْنَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ وَإِنْ قَتَلْنَ،‏‏‏‏ مَا لَمْ يَشْرَكْهَا كَلْبٌ غَيْرُهَا ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ،‏‏‏‏ إِنَّا نَرْمِي بِالْمِعْرَاضِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ مَا خَزَقَ فَكُلْ،‏‏‏‏ وَمَا أَصَابَ بِعَرْضِهِ فَلَا تَأْكُلْ ،
عدی بن حاتم (رض) کہتے ہیں کہ میں نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! ہم لوگ اپنے سدھائے ١ ؎ ہوئے کتے (شکار کے لیے) روانہ کرتے ہیں (یہ کیا ہے ؟ ) آپ نے فرمایا : وہ جو کچھ تمہارے لیے روک رکھیں اسے کھاؤ، میں نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! اگرچہ وہ شکار کو مار ڈالیں ؟ آپ نے فرمایا : اگرچہ وہ (شکار کو) مار ڈالیں (پھر بھی حلال ہے) جب تک ان کے ساتھ دوسرا کتا شریک نہ ہو ، عدی بن حاتم کہتے ہیں : میں نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! ہم لوگ «معراض» (ہتھیار کی چوڑان) سے شکار کرتے ہیں، (اس کا کیا حکم ہے ؟ ) آپ نے فرمایا : جو (ہتھیار کی نوک سے) پھٹ جائے اسے کھاؤ اور جو اس کے عرض (بغیر دھاردار حصے یعنی چوڑان) سے مرجائے اسے مت کھاؤ۔
Sayyidina Adi ibn Hatim (RA) reported that he submitted, “O Messenger of Allah! ﷺ we send our trained hunting dog (to hunt).” He said, “You may eat the game they bring to you.” He submitted, “Even if he kills the game? “ He said, “Yes, provided no other dog accompanies the hunting dog.” He submitted again, “O Messenger of Allah! ﷺ we also throw the mi’rad.O” He said “Eat what they pierce, but if it dies from the blunt of the middle (of the mi’rad) then do not eat it.”[Bukhari 5477, Muslim 1929]
Top