سنن الترمذی - طب کا بیان - 2125
حدیث نمبر: 2037
حَدَّثَنَا عَبَّاسُ بْنُ مُحَمَّدٍ الدُّورِيُّ، حَدَّثَنَا يُونُسُ بْنُ مُحَمَّدٍ، حَدَّثَنَا فُلَيْحُ بْنُ سُلَيْمَانَ، عَنْ عُثْمَانَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ التَّيْمِيِّ، عَنْ يَعْقُوبَ بْنِ أَبِي يَعْقُوبَ، عَنْ أُمِّ الْمُنْذِرِ، قَالَتْ:‏‏‏‏ دَخَلَ عَلَيَّ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَمَعَهُ عَلِيٌّ وَلَنَا دَوَالٍ مُعَلَّقَةٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ فَجَعَلَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَأْكُلُ، ‏‏‏‏‏‏وَعَلِيٌّ مَعَهُ يَأْكُلُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ لِعَلِيٍّ:‏‏‏‏ مَهْ مَهْ يَا عَلِيُّ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّكَ نَاقِهٌ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَجَلَسَ عَلِيٌّ وَالنَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَأْكُلُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَتْ:‏‏‏‏ فَجَعَلْتُ لَهُمْ سِلْقًا وَشَعِيرًا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ يَا عَلِيُّ، ‏‏‏‏‏‏ مِنْ هَذَا فَأَصِبْ فَإِنَّهُ أَوْفَقُ لَكَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ غَرِيبٌ، ‏‏‏‏‏‏لَا نَعْرِفُهُ إِلَّا مِنْ حَدِيثِ فُلَيْحٍ، ‏‏‏‏‏‏وَيُرْوَى عَنْ فُلَيْحٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَيُّوبَ بْنِ عَبْدِ الرَّحْمَنِ
ام منذر (رض) کہتی ہیں کہ رسول اللہ علی (رض) کے ساتھ میرے گھر تشریف لائے، ہمارے گھر کھجور کے خوشے لٹکے ہوئے تھے، رسول اللہ اس میں سے کھانے لگے اور آپ کے ساتھ علی (رض) بھی کھانے لگے، رسول اللہ نے علی (رض) سے فرمایا : علی ! ٹھہر جاؤ، ٹھہر جاؤ، اس لیے کہ ابھی ابھی بیماری سے اٹھے ہو، ابھی کمزوری باقی ہے، ام منذر کہتی ہیں : علی (رض) بیٹھ گئے اور نبی اکرم کھاتے رہے، پھر میں نے ان کے لیے چقندر اور جو تیار کی، نبی اکرم نے کہا : علی ! اس میں سے لو (کھاؤ) ، یہ تمہارے مزاج کے موافق ہے ١ ؎۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - یہ حدیث حسن غریب ہے، ہم اسے صرف فلیح کی روایت سے جانتے ہیں، ٢ - یہ حدیث فلیح سے بھی مروی ہے جسے وہ ایوب بن عبدالرحمٰن سے روایت کرتے ہیں۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الطب ٢ (٣٨٥٦) ، سنن ابن ماجہ/الطب ٣ (٣٤٤٢) (تحفة الأشراف : ١٨٣٦٢) ، و مسند احمد (٦/٣٦٤) (حسن )
وضاحت : ١ ؎ : اس حدیث سے معلوم ہوا کہ مریض اپنے مزاج و طبیعت کا خیال رکھتے ہوئے کھانے پینے کی چیزوں سے پرہیز کرے ، ساتھ ہی یہ بھی معلوم ہوا کہ مرض سے شفاء یابی کے بعد بھی بیمار احتیاط برتتے ہوئے نقصان دہ چیزوں کے کھانے پینے سے پرہیز کرے۔
قال الشيخ الألباني : حسن انظر ما بعده (2038)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 2037
Sayyidah Umm e Mundhir narrated Allah’s Messenger ﷺ visited us, Ali with him. We had a bunch of dates hanging. Allah’s Messenger began to eat and Ali with him. Allah’s Messenger ﷺ said to Ali “Enough, O Ali! You have just recovered.” So he sat down while the Prophet ﷺ ate. Then I prepared for them beetroot and barley and he said to Ali “O Ali, Have from this for, this is more suitable for you.” [Abu Dawud 3856]
Top