سنن الترمذی - قرأت کا بیان - 3087
حدیث نمبر: 2927
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ، أَخْبَرَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ الْأُمَوِيُّ، عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ، عَنِ ابْنِ أَبِي مُلَيْكَةَ، عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ، قَالَتْ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يُقَطِّعُ قِرَاءَتَهُ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ الْحَمْدُ لِلَّهِ رَبِّ الْعَالَمِينَ سورة الفاتحة آية 2 ثُمَّ يَقِفُ الرَّحْمَنِ الرَّحِيمِ سورة الفاتحة آية 3 ثُمَّ يَقِفُ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ يَقْرَؤُهَا مَالِكِ يَوْمِ الدِّينِ سورة الفاتحة آية 4 ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ غَرِيبٌ، ‏‏‏‏‏‏وَبِهِ يَقْرَأُ أَبُو عُبَيْدٍ وَيَخْتَارُهُ، ‏‏‏‏‏‏وَهَكَذَا رَوَى يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ الْأُمَوِيُّ، ‏‏‏‏‏‏وَغَيْرُهُ عَنِ ابْنِ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ أَبِي مُلَيْكَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أُمِّ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَلَيْسَ إِسْنَادُهُ بِمُتَّصِلٍ، ‏‏‏‏‏‏لِأَنَّ اللَّيْثَ بْنَ سَعْدٍ رَوَى هَذَا الْحَدِيثَ عَنِ ابْنِ أَبِي مُلَيْكَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَعْلَى بْنِ مَمْلَكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أُمِّ سَلمَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهَا وَصَفَتْ قِرَاءَةَ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ حَرْفًا حَرْفًا، ‏‏‏‏‏‏وَحَدِيثُ اللَّيْثِ أَصَحُّ، ‏‏‏‏‏‏وَلَيْسَ فِي حَدِيثِ اللَّيْثِ وَكَانَ يَقْرَأُ مَالِكِ يَوْمِ الدِّينِ سورة الفاتحة آية 4.
ام المؤمنین ام سلمہ (رض) کہتی ہیں کہ رسول اللہ ٹھہر ٹھہر کر پڑھتے تھے، آپ : «الحمد لله رب العالمين» پڑھتے، پھر رک جاتے، پھر «الرحمن الرحيم» پڑھتے پھر رک جاتے، اور «ملك يوم الدين» پڑھتے تھے ١ ؎۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - یہ حدیث غریب ہے، ٢ - ابو عبید بھی یہی پڑھتے تھے اور اسی کو پسند کرتے تھے ٢ ؎، ٣ - یحییٰ بن سعید اموی اور ان کے سوا دوسرے لوگوں نے ابن جریج سے اور ابن جریج نے ابن ابی ملیکہ کے واسطہ سے ام سلمہ سے اسی طرح روایت کی ہے، اس حدیث کی سند متصل نہیں ہے، کیونکہ لیث بن سعد نے یہ حدیث ابن ابی ملیکہ سے ابن ابی ملیکہ نے یعلیٰ بن مملک سے انہوں نے ام سلمہ (رض) سے روایت کی ہے کہ انہوں نے نبی اکرم کی قرأت کی کیفیت ایک ایک حرف الگ کر کے بیان کی۔ لیث کی حدیث زیادہ صحیح ہے اور لیث کی حدیث میں یہ ذکر نہیں ہے کہ آپ «ملك يوم الدين» پڑھتے تھے۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الحروف والقراءت (٤٠٠١) (تحفة الأشراف : ١٨١٨٣) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎ : رسول اکرم یعنی «مالک یوم الدین» کی جگہ «ملک یوم الدین» پڑھتے تھے۔ ٢ ؎ : یعنی : ابوعبید قاسم بن سلام «مالک یوم الدین» کے بجائے «ملک یوم الدین» کو پڑھنا پسند کرتے تھے۔
قال الشيخ الألباني : صحيح، الإرواء (343) ، المشکاة (2205) ، صفة الصلاة، مختصر الشمائل (270)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 2927
Sayyidah Umm Salamah said that Allah’s Messenger ﷺ cut his recital into pauses. Thus, he recited ‘Alhamdu lillahi rabbil Alamin’ (verse 1 of surah al-Fatahah) and paused. Then ‘Ar-rahman ar-raheem’ (verse 2) and paused and he recited: ‘Maliki Yaumuddin’ (verse 3…and so on).[Abu Dawud 4001]
Top