سنن الترمذی - نماز کا بیان - 142
حدیث نمبر: 149
حَدَّثَنَا هَنَّادُ بْنُ السَّرِيِّ، حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ أَبِي الزِّنَادِ، عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ الْحَارِثِ بْنِ عَيَّاشِ بْنِ أَبِي رَبِيعَةَ، عَنْ حَكِيمِ بْنِ حَكِيمٍ وَهُوَ ابْنُ عَبَّادِ بْنِ حُنَيْفٍ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي نَافِعُ بْنُ جُبَيْرِ بْنِ مُطْعِمٍ، قَالَ:‏‏‏‏ أَخْبَرَنِي ابْنُ عَبَّاسٍ، أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَمَّنِي جِبْرِيلُ عَلَيْهِ السَّلَام عِنْدَ الْبَيْتِ مَرَّتَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏فَصَلَّى الظُّهْرَ فِي الْأُولَى مِنْهُمَا حِينَ كَانَ الْفَيْءُ مِثْلَ الشِّرَاكِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْعَصْرَ حِينَ كَانَ كُلُّ شَيْءٍ مِثْلَ ظِلِّهِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْمَغْرِبَ حِينَ وَجَبَتِ الشَّمْسُ وَأَفْطَرَ الصَّائِمُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْعِشَاءَ حِينَ غَابَ الشَّفَقُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْفَجْرَ حِينَ بَرَقَ الْفَجْرُ، ‏‏‏‏‏‏وَحَرُمَ الطَّعَامُ عَلَى الصَّائِمِ، ‏‏‏‏‏‏وَصَلَّى الْمَرَّةَ الثَّانِيَةَ الظُّهْرَ حِينَ كَانَ ظِلُّ كُلِّ شَيْءٍ مِثْلَهُ لِوَقْتِ الْعَصْرِ بِالْأَمْسِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْعَصْرَ حِينَ كَانَ ظِلُّ كُلِّ شَيْءٍ مِثْلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْمَغْرِبَ لِوَقْتِهِ الْأَوَّلِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْعِشَاءَ الْآخِرَةَ حِينَ ذَهَبَ ثُلُثُ اللَّيْلِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الصُّبْحَ حِينَ أَسْفَرَتِ الْأَرْضُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ الْتَفَتَ إِلَيَّ جِبْرِيلُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا مُحَمَّدُ هَذَا وَقْتُ الْأَنْبِيَاءِ مِنْ قَبْلِكَ وَالْوَقْتُ فِيمَا بَيْنَ هَذَيْنِ الْوَقْتَيْنِ . قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ وَفِي الْبَاب عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ،‏‏‏‏ وَبُرَيْدَةَ،‏‏‏‏ وَأَبِي مُوسَى،‏‏‏‏ وَأَبِي مَسْعُودٍ الْأَنْصَارِيِّ،‏‏‏‏ وَأَبِي سَعِيدٍ،‏‏‏‏ وَجَابِرٍ،‏‏‏‏ وَعَمْرِو بْنِ حَزْمٍ،‏‏‏‏ وَالْبَرَاءِ،‏‏‏‏ وَأَنَسٍ.
عبداللہ بن عباس (رض) سے روایت ہے کہ نبی اکرم نے فرمایا : جبرائیل (علیہ السلام) نے خانہ کعبہ کے پاس میری دو بار امامت کی، پہلی بار انہوں نے ظہر اس وقت پڑھی (جب سورج ڈھل گیا اور) سایہ جوتے کے تسمہ کے برابر ہوگیا، پھر عصر اس وقت پڑھی جب ہر چیز کا سایہ اس کے ایک مثل ہوگیا ١ ؎، پھر مغرب اس وقت پڑھی جب سورج ڈوب گیا اور روزے دار نے افطار کرلیا، پھر عشاء اس وقت پڑھی جب شفق ٢ ؎ غائب ہوگئی، پھر نماز فجر اس وقت پڑھی جب فجر روشن ہوگئی اور روزہ دار پر کھانا پینا حرام ہوگیا، دوسری بار ظہر کل کی عصر کے وقت پڑھی جب ہر چیز کا سایہ اس کے مثل ہوگیا، پھر عصر اس وقت پڑھی جب ہر چیز کا سایہ اس کے دو مثل ہوگیا، پھر مغرب اس کے اول وقت ہی میں پڑھی (جیسے پہلی بار میں پڑھی تھی) پھر عشاء اس وقت پڑھی جب ایک تہائی رات گزر گئی، پھر فجر اس وقت پڑھی جب اجالا ہوگیا، پھر جبرائیل نے میری طرف متوجہ ہو کر کہا : اے محمد ! یہی آپ سے پہلے کے انبیاء کے اوقات نماز تھے، آپ کی نمازوں کے اوقات بھی انہی دونوں وقتوں کے درمیان ہیں ٣ ؎۔
امام ترمذی کہتے ہیں :
اس باب میں ابوہریرہ، بریدہ، ابوموسیٰ ، ابومسعود انصاری، ابوسعید، جابر، عمرو بن حرم، براء اور انس (رض) سے بھی احادیث آئی ہیں۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الصلاة ٢ (٣٩٣) ، ( تحفة الأشراف : ٦٥١٩) ، مسند احمد (١/٣٣٣، ٣٥٤) (حسن صحیح)
وضاحت : ١ ؎ : اس حدیث سے معلوم ہوا کہ ظہر کا وقت ایک مثل تک رہتا ہے اس کے بعد عصر کا وقت شروع ہوجاتا ہے جمہور کا یہی مسلک ہے اور عصر کے وقت سے متعلق امام ابوحنیفہ کا مشہور قول دو مثل کا ہے لیکن یہ کسی صحیح مرفوع حدیث سے ثابت نہیں۔ بلکہ بعض علمائے احناف نے صحیح احادیث میں ان کے اس قول کو رد کردیا ہے ( تفصیل کے لیے دیکھئیے : التعلیق الممجد علی موطا الإمام محمد ، ص : ٤١ ، ط/قدیمی کتب خانہ کراچی ) ۔ ٢ ؎ : اس سے مراد وہ سرخی ہے جو سورج ڈوب جانے کے بعد مغرب ( پچھم ) میں باقی رہتی ہے۔ ٣ ؎ : پہلے دن جبرائیل (علیہ السلام) نے ساری نمازیں اول وقت میں پڑھائیں اور دوسرے دن آخری وقت میں تاکہ ہر نماز کا اول اور آخر وقت معلوم ہوجائے۔
قال الشيخ الألباني : حسن صحيح، المشکاة (583) ، الإرواء (249) ، صحيح أبي داود (416)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 149
Sayyidina Ibn Abbas (RA) reported that the Prophet ﷺ said, "Jibril led me in Salah twice near Bayt Allah. The first time, we offered the Salah of Zuhr when the shadow was like the thong of a shoe. Then, we offered Asr when the shadow of everything was equal to it, and maghrib after sunset when the fasting man takes if tar (breaks his fast), and Isha when the twilight disappeared, and fair when one who fasts is forbidden food and drink. The second time, we offerred Zuhr when the shadow of everything was like it in length at the time of Asr on the previous day. Then we offered the Asr when the shadow of everything was twice as long. We prayed Maghrib at the same time as the previous day; we prayed Isha when one-third of the night was over and Fajr when the earth was well-lit. Then Jibril turned to me and said; "O Muhammad ﷺ ! This was the time observed by Prophets ﷺ before you, and the time (of five Salah) is between these two times."
Top