سنن الترمذی - وصیتوں کے متعلق ابواب - 2217
حدیث نمبر: 2116
حَدَّثَنَا ابْنُ أَبِي عُمَرَ، حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ، عَنِ الزُّهْرِيِّ، عَنْ عَامِرِ بْنِ سَعْدِ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ، عَنْ أَبِيهِ، قَالَ:‏‏‏‏ مَرِضْتُ عَامَ الْفَتْحِ مَرَضًا أَشْفَيْتُ مِنْهُ عَلَى الْمَوْتِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَانِي رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَعُودُنِي، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏إِنَّ لِي مَالًا كَثِيرًا، ‏‏‏‏‏‏وَلَيْسَ يَرِثُنِي إِلَّا ابْنَتِي أَفَأُوصِي بِمَالِي كُلِّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَا ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ فَثُلُثَيْ مَالِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَا ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ فَالشَّطْرُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ لَا ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ فَالثُّلُثُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ الثُّلُثُ وَالثُّلُثُ كَثِيرٌ، ‏‏‏‏‏‏إِنَّكَ إِنْ تَدَعْ وَرَثَتَكَ أَغْنِيَاءَ، ‏‏‏‏‏‏خَيْرٌ مِنْ أَنْ تَدَعَهُمْ عَالَةً يَتَكَفَّفُونَ النَّاسَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنَّكَ لَنْ تُنْفِقَ نَفَقَةً إِلَّا أُجِرْتَ فِيهَا حَتَّى اللُّقْمَةَ تَرْفَعُهَا إِلَى فِي امْرَأَتِكَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أُخَلَّفُ عَنْ هِجْرَتِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنَّكَ لَنْ تُخَلَّفَ بَعْدِي فَتَعْمَلَ عَمَلًا تُرِيدُ بِهِ وَجْهَ اللَّهِ إِلَّا ازْدَدْتَ بِهِ رِفْعَةً وَدَرَجَةً وَلَعَلَّكَ أَنْ تُخَلَّفَ حَتَّى يَنْتَفِعَ بِكَ أَقْوَامٌ وَيُضَرَّ بِكَ آخَرُونَ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ أَمْضِ لِأَصْحَابِي هِجْرَتَهُمْ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا تَرُدَّهُمْ عَلَى أَعْقَابِهِمْ، ‏‏‏‏‏‏لَكِنْ الْبَائِسُ سَعْدُ ابْنُ خَوْلَةَ يَرْثِي لَهُ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ أَنْ مَاتَ بِمَكَّةَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ وَفِي الْبَابِ عَنِ ابْنِ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏وَهَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ صَحِيحٌ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ رُوِيَ هَذَا الْحَدِيثُ مِنْ غَيْرِ وَجْهٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعْدِ بْنِ أَبِي وَقَّاصٍ، ‏‏‏‏‏‏وَالْعَمَلُ عَلَى هَذَا عِنْدَ أَهْلِ الْعِلْمِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّهُ لَيْسَ لِلرَّجُلِ أَنْ يُوصِيَ بِأَكْثَرَ مِنَ الثُّلُثِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدِ اسْتَحَبَّ بَعْضُ أَهْلِ الْعِلْمِ أَنْ يَنْقُصَ مِنَ الثُّلُثِ لِقَوْلِ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَالثُّلُثُ كَثِيرٌ.
سعد بن ابی وقاص (رض) کہتے ہیں کہ فتح مکہ کے سال میں ایسا بیمار پڑا کہ موت کے قریب پہنچ گیا، رسول اللہ میری عیادت کو آئے تو میں نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! میرے پاس بہت مال ہے اور ایک لڑکی کے سوا میرا کوئی وارث نہیں ہے، کیا میں اپنے پورے مال کی وصیت کر دوں ؟ آپ نے فرمایا : نہیں ، میں نے عرض کیا : دو تہائی مال کی ؟ آپ نے فرمایا : نہیں ، میں نے عرض کیا : آدھا مال کی ؟ آپ نے کہا : نہیں ، میں نے عرض کیا : ایک تہائی کی ؟ آپ نے فرمایا : ایک تہائی کی وصیت کرو اور ایک تہائی بھی بہت ہے ١ ؎، تم اپنے وارثوں کو مالدار چھوڑو یہ اس بات سے بہتر ہے کہ تم ان کو محتاج و غریب چھوڑ کر جاؤ کہ وہ لوگوں کے سامنے ہاتھ پھیلاتے پھیریں، تم جو بھی خرچ کرتے ہو اس پر تم کو ضرور اجر ملتا ہے، یہاں تک کہ اس لقمہ پر بھی جس کو تم اپنی بیوی کے منہ میں ڈالتے ہو ، میں نے عرض کیا : اللہ کے رسول ! میں تو اپنی ہجرت سے پیچھے رہ جاؤں گا ؟ آپ نے فرمایا : تم میرے بعد زندہ رہ کر اللہ کی رضا مندی کی خاطر جو بھی عمل کرو گے اس کی وجہ سے تمہارے درجات میں بلندی اور اضافہ ہوتا جائے گا، شاید کہ تم میرے بعد زندہ رہو یہاں تک کہ تم سے کچھ قومیں نفع اٹھائیں گی اور دوسری نقصان اٹھائیں گی ٢ ؎، (پھر آپ نے دعا کی) اے اللہ ! میرے صحابہ کی ہجرت برقرار رکھ اور ایڑیوں کے بل انہیں نہ لوٹا دنیا لیکن بیچارے سعد بن خولہ جن پر رسول اللہ افسوس کرتے تھے، (ہجرت کے بعد) مکہ ہی میں ان کی وفات ہوئی۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - یہ حدیث حسن صحیح ہے، ٢ - سعد بن ابی وقاص سے یہ حدیث کئی سندوں سے آئی ہے، ٣ - اس باب میں ابن عباس (رض) سے بھی روایت ہے، ٤ - اہل علم کا اسی پر عمل ہے کہ ایک تہائی سے زیادہ کی وصیت کرنا آدمی کے لیے جائز نہیں ہے، ٤ - بعض اہل علم ایک تہائی سے کم کی وصیت کرنے کو مستحب سمجھتے ہیں اس لیے کہ رسول اللہ نے فرمایا : ایک تہائی بھی زیادہ ہے ۔
تخریج دارالدعوہ : انظر حدیث رقم : ٩٧٥ (تحفة الأشراف : ٣٨٩٠) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎ : اس حدیث سے معلوم ہوا کہ صاحب مال ورثاء کو محروم رکھنے کی کوشش نہ کرے ، اس لیے وہ زیادہ سے زیادہ اپنے تہائی مال کی وصیت کرسکتا ہے ، اس سے زیادہ کی وصیت نہیں کرسکتا ہے ، البتہ ورثاء اگر زائد کی اجازت دیں تو پھر کوئی حرج کی بات نہیں ہے ، یہ بھی معلوم ہوا کہ ورثاء کا مالدار رہنا اور لوگوں کے سامنے ہاتھ پھیلانے سے بچنا بہت بہتر ہے۔ ٢ ؎ : آپ نے سعد بن ابی وقاص کے متعلق جس امید کا اظہار کیا تھا وہ پوری ہوئی ، چناچہ سعد اس مرض سے شفاء یاب ہوئے اور آپ کے بعد کافی لمبی عمر پائی ، ان سے ایک طرف مسلمانوں کو فائدہ پہنچا تو دوسری جانب کفار کو زبردست نقصان اٹھانا پڑا ، ان کا انتقال مشہور قول کے مطابق ٥٠ ھ میں ہوا تھا۔
قال الشيخ الألباني : صحيح، ابن ماجة (2708)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 2116
Sa’d ibn Abu Waqas (RA) narrated I fell ill during the year of the conquest of Makkah and found myself on the point of death. Allah’s Messenger ﷺ came to me and enquired about my health. I said, “O Messenger of Allah, I have abundant wealth and no one but my one daughter will inherit me. So, I bequeath all my wealth.” He said, “No.” So, I said, “Two-thirds”, but he said,” No” I said, “A half “, but he again said, “No.” I said “Then, one-third.” He agreed, ‘One-third, but one-third is much. Indeed, if you leave your heirs rich, it is better than to leave them poor, begging from people. You will not spend anything without being rewarded for it, even the morsel you raise to the mouth of your wife.” I said, “O Messenger ﷺ of Allah, will I have to stay behind from my hijrah.” He said, “You will never remain behind, after me, if you do deeds seeking pleasure of Allah, your rank will be raised. Perhaps you survive me and some people benefit from you while same suffer loss. O Allah complete the hijrah of my sahabah. And do not cause them to turn back on their heels.” But the unfortunate Sad ibn Khawlah! Allah’s Messenger grieved for him, he died at Makkah.[Ahmed 1546, Bukhari 56, Muslim 1628, Abu Dawud 2864, Ibn Majah 2708, Nisai 3626] --------------------------------------------------------------------------------
Top