سنن ابو داؤد - استغفار کا بیان - 1510
حدیث نمبر: 1514
حَدَّثَنَا النُّفَيْلِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مَخْلَدُ بْنُ يَزِيدَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عُثْمَانُ بْنُ وَاقِدٍ الْعُمَرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي نُصَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَوْلًى لِأَبِي بَكْرٍ الصِّدِّيق، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي بَكْرٍ الصِّدِّيقِ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ مَا أَصَرَّ مَنِ اسْتَغْفَرَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ عَادَ فِي الْيَوْمِ سَبْعِينَ مَرَّةٍ.
ابوبکر صدیق (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ نے فرمایا : جو استغفار کرتا رہا اس نے گناہ پر اصرار نہیں کیا گرچہ وہ دن بھر میں ستر بار اس گناہ کو دہرائے ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : سنن الترمذی/الدعوات ١٠٧ (٣٥٥٩) ، (تحفة الأشراف : ٦٦٢٨) (ضعیف) (اس کے ایک راوی مولی لا ٔبی بکر مبہم مجہول آدمی ہیں )
وضاحت : ١ ؎ : صغیرہ گناہوں پر اصرار سے وہ کبیرہ ہوجاتے ہیں، اور کبیرہ پر اصرار کرنے سے آدمی کفر تک پہنچ جاتا ہے، لیکن اگر ہر گناہ کے بعد صدق دل سے توبہ و استغفار کرلے اور اسے دوبارہ نہ کرنے کی پختہ نیت کرے، مگر بدقسمتی سے پھر اس میں مبتلا ہوجائے تو یہ اصرار نہ ہوگا، اس طرح اس حدیث سے استغفار کی فضیلت ثابت ہوئی۔
Narrated Abu Bakr as-Siddiq: The Prophet ﷺ said: He who asks pardon is not a confirmed sinner, even if he returns to his sin seventy times a day.
Top