صحيح البخاری - نماز کا بیان - 346
حدیث نمبر: 349
حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ بُكَيْرٍ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا اللَّيْثُ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يُونُسَ ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ ابْنِ شِهَابٍ ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ أَبُو ذَرٍّيُحَدِّثُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فُرِجَ عَنْ سَقْفِ بَيْتِي وَأَنَا بِمَكَّةَ، ‏‏‏‏‏‏فَنَزَلَ جِبْرِيلُ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَفَرَجَ صَدْرِي، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ غَسَلَهُ بِمَاءِ زَمْزَمَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ جَاءَ بِطَسْتٍ مِنْ ذَهَبٍ مُمْتَلِئٍ حِكْمَةً وَإِيمَانًا، ‏‏‏‏‏‏فَأَفْرَغَهُ فِي صَدْرِي، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَطْبَقَهُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَخَذَ بِيَدِي فَعَرَجَ بِي إِلَى السَّمَاءِ الدُّنْيَا، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا جِئْتُ إِلَى السَّمَاءِ الدُّنْيَا، ‏‏‏‏‏‏قَالَ جِبْرِيلُ لِخَازِنِ السَّمَاءِ:‏‏‏‏ افْتَحْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ هَذَا جِبْرِيلُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ هَلْ مَعَكَ أَحَدٌ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏مَعِي مُحَمَّدٌ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أُرْسِلَ إِلَيْهِ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ نَعَمْ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا فَتَحَ عَلَوْنَا السَّمَاءَ الدُّنْيَا، ‏‏‏‏‏‏فَإِذَا رَجُلٌ قَاعِدٌ عَلَى يَمِينِهِ أَسْوِدَةٌ وَعَلَى يَسَارِهِ أَسْوِدَةٌ، ‏‏‏‏‏‏إِذَا نَظَرَ قِبَلَ يَمِينِهِ ضَحِكَ وَإِذَا نَظَرَ قِبَلَ يَسَارِهِ بَكَى، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِالنَّبِيِّ الصَّالِحِ وَالِابْنِ الصَّالِحِ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ لِجِبْرِيلَ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَال:‏‏‏‏ هَذَا آدَمُ، ‏‏‏‏‏‏وَهَذِهِ الْأَسْوِدَةُ عَنْ يَمِينِهِ وَشِمَالِهِ نَسَمُ بَنِيهِ، ‏‏‏‏‏‏فَأَهْلُ الْيَمِينِ مِنْهُمْ أَهْلُ الْجَنَّةِ وَالْأَسْوِدَةُ الَّتِي عَنْ شِمَالِهِ أَهْلُ النَّارِ ؟ فَإِذَا نَظَرَ عَنْ يَمِينِهِ ضَحِكَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِذَا نَظَرَ قِبَلَ شِمَالِهِ بَكَى حَتَّى عَرَجَ بِي إِلَى السَّمَاءِ الثَّانِيَةِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لِخَازِنِهَا:‏‏‏‏ افْتَحْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لَهُ خَازِنِهَا مِثْلَ مَا قَالَ الْأَوَّلُ، ‏‏‏‏‏‏فَفَتَحَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَنَسٌ:‏‏‏‏ فَذَكَرَ أَنَّهُ وَجَدَ فِي السَّمَوَات آدَمَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِدْرِيسَ، ‏‏‏‏‏‏وَمُوسَى، ‏‏‏‏‏‏وَعِيسَى، ‏‏‏‏‏‏وَإِبْرَاهِيمَ صَلَوَاتُ اللَّهِ عَلَيْهِمْ، ‏‏‏‏‏‏وَلَمْ يُثْبِتْ كَيْفَ مَنَازِلُهُمْ، ‏‏‏‏‏‏غَيْرَ أَنَّهُ ذَكَرَ أَنَّهُ وَجَدَ آدَمَ فِي السَّمَاءِ الدُّنْيَا، ‏‏‏‏‏‏وَإِبْرَاهِيمَ فِي السَّمَاءِ السَّادِسَةِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَنَسٌ:‏‏‏‏ فَلَمَّا مَرَّ جِبْرِيلُ بِالنَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِإِدْرِيسَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِالنَّبِيِّ الصَّالِحِ وَالْأَخِ الصَّالِحِ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ هَذَا إِدْرِيسُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ مَرَرْتُ بِمُوسَى، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِالنَّبِيِّ الصَّالِحِ وَالْأَخِ الصَّالِحِ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ هَذَا مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ مَرَرْتُ بِعِيسَى، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِالْأَخِ الصَّالِحِ وَالنَّبِيِّ الصَّالِحِ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ هَذَا عِيسَى، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ مَرَرْتُ بِإِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِالنَّبِيِّ الصَّالِحِ وَالِابْنِ الصَّالِحِ، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ هَذَا إِبْرَاهِيمُ عليه وسلم، ‏‏‏‏‏‏قَالَ ابْنُ شِهَابٍ:‏‏‏‏ فَأَخْبَرَنِي ابْنُ حَزْمٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّابْنَ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبَا حَبَّةَ الْأَنْصَارِيَّ كَانَا يَقُولَانِ:‏‏‏‏ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ ثُمَّ عُرِجَ بِي حَتَّى ظَهَرْتُ لِمُسْتَوًى أَسْمَعُ فِيهِ صَرِيفَ الْأَقْلَامِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ ابْنُ حَزْمٍ، ‏‏‏‏‏‏وَأَنَسُ بْنُ مَالِكٍ:‏‏‏‏ قَالَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ فَفَرَضَ اللَّهُ عَلَى أُمَّتِي خَمْسِينَ صَلَاةً، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعْتُ بِذَلِكَ حَتَّى مَرَرْتُ عَلَى مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا فَرَضَ اللَّهُ لَكَ عَلَى أُمَّتِكَ ؟ قُلْتُ:‏‏‏‏ فَرَضَ خَمْسِينَ صَلَاةً، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَارْجِعْ إِلَى رَبِّكَ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّ أُمَّتَكَ لَا تُطِيقُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَرَاجَعْتُ فَوَضَعَ شَطْرَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعْتُ إِلَى مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ وَضَعَ شَطْرَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ رَاجِعْ رَبَّكَ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّ أُمَّتَكَ لَا تُطِيقُ، ‏‏‏‏‏‏فَرَاجَعْتُ:‏‏‏‏ فَوَضَعَ شَطْرَهَا، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعْتُ إِلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ ارْجِعْ إِلَى رَبِّكَ فَإِنَّ أُمَّتَكَ لَا تُطِيقُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَرَاجَعْتُهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ هِيَ خَمْسٌ وَهِيَ خَمْسُونَ لَا يُبَدَّلُ الْقَوْلُ لَدَيَّ، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعْتُ إِلَى مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ رَاجِعْ رَبَّكَ، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ اسْتَحْيَيْتُ مِنْ رَبِّي، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ انْطَلَقَ بِي حَتَّى انْتَهَى بِي إِلَى سِدْرَةِ الْمُنْتَهَى، ‏‏‏‏‏‏وَغَشِيَهَا أَلْوَانٌ لَا أَدْرِي مَا هِيَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أُدْخِلْتُ الْجَنَّةَ فَإِذَا فِيهَا حَبَايِلُ اللُّؤْلُؤِ وَإِذَا تُرَابُهَا الْمِسْكُ.
ہم سے یحییٰ بن بکیر نے بیان کیا، انہوں نے کہا ہم سے لیث بن سعد نے یونس کے واسطہ سے بیان کیا، انہوں نے ابن شہاب سے، انہوں نے انس بن مالک سے، انہوں نے فرمایا کہ ابوذر غفاری (رض) یہ حدیث بیان کرتے تھے کہ نبی کریم ﷺ نے فرمایا کہ میرے گھر کی چھت کھول دی گئی، اس وقت میں مکہ میں تھا۔ پھر جبرائیل (علیہ السلام) اترے اور انہوں نے میرا سینہ چاک کیا۔ پھر اسے زمزم کے پانی سے دھویا۔ پھر ایک سونے کا طشت لائے جو حکمت اور ایمان سے بھرا ہوا تھا۔ اس کو میرے سینے میں رکھ دیا، پھر سینے کو جوڑ دیا، پھر میرا ہاتھ پکڑا اور مجھے آسمان کی طرف لے کر چلے۔ جب میں پہلے آسمان پر پہنچا تو جبرائیل (علیہ السلام) نے آسمان کے داروغہ سے کہا کھولو۔ اس نے پوچھا، آپ کون ہیں ؟ جواب دیا کہ جبرائیل، پھر انہوں نے پوچھا کیا آپ کے ساتھ کوئی اور بھی ہے ؟ جواب دیا، ہاں میرے ساتھ محمد ( ) ہیں۔ انہوں نے پوچھا کہ کیا ان کے بلانے کے لیے آپ کو بھیجا گیا تھا ؟ کہا، جی ہاں ! پھر جب انہوں نے دروازہ کھولا تو ہم پہلے آسمان پر چڑھ گئے، وہاں ہم نے ایک شخص کو بیٹھے ہوئے دیکھا۔ ان کے داہنی طرف کچھ لوگوں کے جھنڈ تھے اور کچھ جھنڈ بائیں طرف تھے۔ جب وہ اپنی داہنی طرف دیکھتے تو مسکرا دیتے اور جب بائیں طرف نظر کرتے تو روتے۔ انہوں نے مجھے دیکھ کر فرمایا، آؤ اچھے آئے ہو۔ صالح نبی اور صالح بیٹے ! میں نے جبرائیل (علیہ السلام) سے پوچھا یہ کون ہیں ؟ انہوں نے کہا کہ یہ آدم (علیہ السلام) ہیں اور ان کے دائیں بائیں جو جھنڈ ہیں یہ ان کے بیٹوں کی روحیں ہیں۔ جو جھنڈ دائیں طرف ہیں وہ جنتی ہیں اور بائیں طرف کے جھنڈ دوزخی روحیں ہیں۔ اس لیے جب وہ اپنے دائیں طرف دیکھتے ہیں تو خوشی سے مسکراتے ہیں اور جب بائیں طرف دیکھتے ہیں تو (رنج سے) روتے ہیں۔ پھر جبرائیل مجھے لے کر دوسرے آسمان تک پہنچے اور اس کے داروغہ سے کہا کہ کھولو۔ اس آسمان کے داروغہ نے بھی پہلے کی طرح پوچھا پھر کھول دیا۔ انس نے کہا کہ ابوذر نے ذکر کیا کہ آپ یعنی نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم نے آسمان پر آدم، ادریس، موسیٰ ، عیسیٰ اور ابراہیم (علیہم السلام) کو موجود پایا۔ اور ابوذر (رض) نے ہر ایک کا ٹھکانہ نہیں بیان کیا۔ البتہ اتنا بیان کیا کہ نبی کریم نے آدم کو پہلے آسمان پر پایا اور ابراہیم (علیہ السلام) کو چھٹے آسمان پر۔ انس نے بیان کیا کہ جب جبرائیل (علیہ السلام) نبی کریم کے ساتھ ادریس (علیہ السلام) پر گزرے۔ تو انہوں نے فرمایا کہ آؤ اچھے آئے ہو صالح نبی اور صالح بھائی۔ میں نے پوچھا یہ کون ہیں ؟ جواب دیا کہ یہ ادریس (علیہ السلام) ہیں۔ پھر موسیٰ (علیہ السلام) تک پہنچا تو انہوں نے فرمایا آؤ اچھے آئے ہو صالح نبی اور صالح بھائی۔ میں نے پوچھا یہ کون ہیں ؟ جبرائیل (علیہ السلام) نے بتایا کہ موسیٰ (علیہ السلام) ہیں۔ پھر میں عیسیٰ (علیہ السلام) تک پہنچا، انہوں نے کہا آؤ اچھے آئے ہو صالح نبی اور صالح بھائی۔ میں نے پوچھا یہ کون ہیں ؟ جبرائیل (علیہ السلام) نے بتایا کہ یہ عیسیٰ (علیہ السلام) ہیں۔ پھر میں ابراہیم (علیہ السلام) تک پہنچا۔ انہوں نے فرمایا آؤ اچھے آئے ہو صالح نبی اور صالح بیٹے۔ میں نے پوچھا یہ کون ہیں ؟ جبرائیل (علیہ السلام) نے بتایا کہ یہ ابراہیم (علیہ السلام) ہیں۔ ابن شہاب نے کہا کہ مجھے ابوبکر بن حزم نے خبر دی کہ عبداللہ بن عباس اور ابوحبۃ الانصاری رضی اللہ عنہم کہا کرتے تھے کہ نبی کریم نے فرمایا، پھر مجھے جبرائیل (علیہ السلام) لے کر چڑھے، اب میں اس بلند مقام تک پہنچ گیا جہاں میں نے قلم کی آواز سنی (جو لکھنے والے فرشتوں کی قلموں کی آواز تھی) ابن حزم نے (اپنے شیخ سے) اور انس بن مالک نے ابوذر (رض) سے نقل کیا کہ نبی کریم نے فرمایا۔ پس اللہ تعالیٰ نے میری امت پر پچاس وقت کی نمازیں فرض کیں۔ میں یہ حکم لے کر واپس لوٹا۔ جب موسیٰ (علیہ السلام) تک پہنچا تو انہوں نے پوچھا کہ آپ کی امت پر اللہ نے کیا فرض کیا ہے ؟ میں نے کہا کہ پچاس وقت کی نمازیں فرض کی ہیں۔ انہوں نے فرمایا آپ واپس اپنے رب کی بارگاہ میں جائیے۔ کیونکہ آپ کی امت اتنی نمازوں کو ادا کرنے کی طاقت نہیں رکھتی ہے۔ میں واپس بارگاہ رب العزت میں گیا تو اللہ نے اس میں سے ایک حصہ کم کردیا، پھر موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس آیا اور کہا کہ ایک حصہ کم کردیا گیا ہے، انہوں نے کہا کہ دوبارہ جائیے کیونکہ آپ کی امت میں اس کے برداشت کی بھی طاقت نہیں ہے۔ پھر میں بارگاہ رب العزت میں حاضر ہوا۔ پھر ایک حصہ کم ہوا۔ جب موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس پہنچا تو انہوں نے فرمایا کہ اپنے رب کی بارگاہ میں پھر جائیے، کیونکہ آپ کی امت اس کو بھی برداشت نہ کرسکے گی، پھر میں باربار آیا گیا پس اللہ تعالیٰ نے فرمایا کہ یہ نمازیں (عمل میں) پانچ ہیں اور (ثواب میں) پچاس (کے برابر) ہیں۔ میری بات بدلی نہیں جاتی۔ اب میں موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس آیا تو انہوں نے پھر کہا کہ اپنے رب کے پاس جائیے۔ لیکن میں نے کہا مجھے اب اپنے رب سے شرم آتی ہے۔ پھر جبرائیل مجھے سدرۃ المنتہیٰ تک لے گئے جسے کئی طرح کے رنگوں نے ڈھانک رکھا تھا۔ جن کے متعلق مجھے معلوم نہیں ہوا کہ وہ کیا ہیں۔ اس کے بعد مجھے جنت میں لے جایا گیا، میں نے دیکھا کہ اس میں موتیوں کے ہار ہیں اور اس کی مٹی مشک کی ہے۔
Narrated Abu Dhar (RA): Allah's Apostle ﷺ said, "While I was at Makkah the roof of my house was opened and Gabriel (علیہ السلام) descended, opened my chest, and washed it with Zam-zam water. Then he brought a golden tray full of wisdom and faith and having poured its contents into my chest, he closed it. Then he took my hand and ascended with me to the nearest heaven, when I reached the nearest heaven, Gabriel (علیہ السلام) said to the gatekeeper of the heaven, 'Open (the gate).' The gatekeeper asked, 'Who is it?' Gabriel (علیہ السلام) answered: ' Gabriel (علیہ السلام).' He asked, 'Is there anyone with you?' Gabriel (علیہ السلام) replied, 'Yes, Muhammad ﷺ is with me.' He asked, 'Has he been called?' Gabriel (علیہ السلام) said, 'Yes.' So the gate was opened and we went over the nearest heaven and there we saw a man sitting with some people on his right and some on his left. When he looked towards his right, he laughed and when he looked toward his left he wept. Then he said, 'Welcome! O pious Prophet ﷺ and pious son.' I asked Gabriel (علیہ السلام), 'Who is he?' He replied, 'He is Adam and the people on his right and left are the souls of his offspring. Those on his right are the people of Paradise and those on his left are the people of Hell and when he looks towards his right he laughs and when he looks towards his left he weeps.' Then he ascended with me till he reached the second heaven and he ( Gabriel (علیہ السلام)) said to its gatekeeper, 'Open (the gate).' The gatekeeper said to him the same as the gatekeeper of the first heaven had said and he opened the gate. Anas (RA) said: "Abu Dhar (RA) added that the Prophet ﷺ met Adam, Idris, Moses (علیہ السلام), Jesus and Abraham, he (Abu Dhar (RA)) did not mention on which heaven they were but he mentioned that he (the Prophet) met Adarn on the nearest heaven and Abraham on the sixth heaven. Anas (RA) said, "When Gabriel (علیہ السلام) along with the Prophet ﷺ passed by Idris, the latter said, 'Welcome! O pious Prophet ﷺ and pious brother.' The Prophet ﷺ asked, 'Who is he?' Gabriel (علیہ السلام) replied, 'He is Idris." The Prophet ﷺ added, "I passed by Moses (علیہ السلام) and he said, 'Welcome! O pious Prophet ﷺ and pious brother.' I asked Gabriel (علیہ السلام), 'Who is he?' Gabriel (علیہ السلام) replied, 'He is Moses (علیہ السلام).' Then I passed by Jesus and he said, 'Welcome! O pious brother and pious Prophet.' I asked, 'Who is he?' Gabriel (علیہ السلام) replied, 'He is Jesus. Then I passed by Abraham and he said, 'Welcome! O pious Prophet ﷺ and pious son.' I asked Gabriel (علیہ السلام), 'Who is he?' Gabriel (علیہ السلام) replied, 'He is Abraham. The Prophet ﷺ added, 'Then Gabriel (علیہ السلام) ascended with me to a place where I heard the creaking of the pens." Ibn Hazm and Anas bin Malik (RA) said: The Prophet ﷺ said, "Then Allah enjoined fifty prayers on my followers when I returned with this order of Allah; I passed by Moses (علیہ السلام) who asked me, 'What has Allah enjoined on your followers?' I replied, 'He has enjoined fifty prayers on them.' Moses (علیہ السلام) said, 'Go back to your Lord (and appeal for reduction) for your followers will not be able to bear it.' (So I went back to Allah and requested for reduction) and He reduced it to half. When I passed by Moses (علیہ السلام) again and informed him about it, he said, 'Go back to your Lord as your followers will not be able to bear it.' So I returned to Allah and requested for further reduction and half of it was reduced. I again passed by Moses (علیہ السلام) and he said to me: 'Return to your Lord, for your followers will not be able to bear it. So I returned to Allah and He said, 'These are five prayers and they are all (equal to) fifty (in reward) for My Word does not change.' I returned to Moses (علیہ السلام) and he told me to go back once again. I replied, 'Now I feel shy of asking my Lord again.' Then Gabriel (علیہ السلام) took me till we '' reached Sidrat-il-Muntaha (Lote tree of; the utmost boundry) which was shrouded in colors, indescribable. Then I was admitted into Paradise where I found small (tents or) walls (made) of pearls and its earth was of musk.
Top