سنن ابنِ ماجہ - اقامت نماز اور اس کا طریقہ - 803
حدیث نمبر: 803
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ مُحَمَّدٍ الطَّنَافِسِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو أُسَامَةَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنِي عَبْدُ الْحَمِيدِ بْنُ جَعْفَرٍ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَمْرِو بْنِ عَطَاءٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْتُ أَبَا حُمَيْدٍ السَّاعِدِيَّ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَإِذَا قَامَ إِلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏اسْتَقْبَلَ الْقِبْلَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَرَفَعَ يَدَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُ أَكْبَرُ.
ابو حمید ساعدی (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ جب نماز کے لیے کھڑے ہوتے تو قبلہ رخ ہوتے، اور اپنے دونوں ہاتھ اٹھا کر «الله أكبر» کہتے ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : صحیح البخاری/الأذان ٤٥ (٨٢٨) ، سنن ابی داود/الصلاة ١١٧ (٩٦٤، ٩٦٥) ، سنن الترمذی/الصلاة ٧٨ (٣٠٤، ٣٠٥) ، سنن النسائی/التطبیق ٦ (١٠٤٠) ، (تحفة الأشراف : ١١٨٩٧) ، وقد أخرجہ : مسند احمد (٥/٤٢٤) سنن الدارمی/الصلاة ٣٢ (١٢٧٣) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎: اس تکبیر کو تکبیر تحریمہ کہتے ہیں، جو متفقہ طور پر نماز میں فرض ہے، علماء اہل حدیث کے نزدیک جلسہ اولیٰ اور جلسۂ استراحت کے سوا، نماز کے تمام ارکان جو نبی اکرم سے ثابت ہیں، فرض ہیں، اور تکبیر تحریمہ اور ہر رکعت میں سورة فاتحہ اور تشہد اخیر اور سلام کے علاوہ اذکار نماز میں سے کوئی ذکر واجب نہیں ہے، اس کے علاوہ اور ادعیہ و اذکار سنت ہیں، اب تکبیر تحریمہ کے وقت ہاتھ اٹھانا کانوں تک یا مونڈھوں تک دونوں طرح وارد ہے، اور یہ سنت ہے۔
Muhammad bin 'Amr bin 'Ata' said: "I heard Abu Humaid As-Sa'idi say: 'When the Messenger of Allah ﷺ stood up for prayer, he would face the prayer direction, raise his hands, and say: "Allahu Akbar (Allah is Most Great)." (Sahih)
Top