سنن ابنِ ماجہ - جنازوں کا بیان - 1433
حدیث نمبر: 1433
حَدَّثَنَا هَنَّادُ بْنُ السَّرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا أَبُو الْأَحْوَصِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي إِسْحَاق، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الْحَارِثِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ لِلْمُسْلِمِ عَلَى الْمُسْلِمِ سِتَّةٌ بِالْمَعْرُوفِ:‏‏‏‏ يُسَلِّمُ عَلَيْهِ إِذَا لَقِيَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَيُجِيبُهُ إِذَا دَعَاهُ، ‏‏‏‏‏‏وَيُشَمِّتُهُ إِذَا عَطَسَ، ‏‏‏‏‏‏وَيَعُودُهُ إِذَا مَرِضَ، ‏‏‏‏‏‏وَيَتْبَعُ جِنَازَتَهُ إِذَا مَاتَ، ‏‏‏‏‏‏وَيُحِبُّ لَهُ مَا يُحِبُّ لِنَفْسِهِ.
علی (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے فرمایا : مسلمان کی مسلمان پر حسن سلوک کے چھ حقوق ہیں : ١ ۔ جب اس سے ملاقات ہو تو اسے سلام کرے، ٢ ۔ جب وہ دعوت دے تو اس کی دعوت قبول کرے، ٣ ۔ جب وہ چھینکے اور «الحمد لله» کہے تو جواب میں «يرحمک الله» کہے، ٤ ۔ جب وہ بیمار ہو تو اس کی عیادت (بیمار پرسی) کرے، ٥ ۔ جب اس کا انتقال ہوجائے تو اس کے جنازہ کے ساتھ جائے، ٦ ۔ اور اس کے لیے وہی پسند کرے جو اپنے لیے پسند کرتا ہے ۔
تخریج دارالدعوہ : سنن الترمذی/الأدب ١ (٢٧٣٦) ، (تحفة الأشراف : ١٠٠٤٤) ، وقد أخرجہ : مسند احمد (١/٨٨، ٨٩، ٢/٣٧٢، ٤١٢) ، سنن الدارمی/الاستئذان ٥ (٢٦٧٥) (صحیح )
It was narrated that 'Ali said that the Messenger of Allah ﷺ said: "The Muslim has six courtesies due from the Muslim:He should greet him with Salaam when he meets him; he should accept his invitation if he invites him; he should answer [by Yarhamuk-Allah (may Allah have mercy on you) to him if he sneezes (and says AI-Hamdulillah); he should visit him if he falls sick; he should follow his funeral if he dies; and he should love for him what he loves for himself." (Sahih)
Top