سنن ابنِ ماجہ - مشروبات کا بیان - 3376
حدیث نمبر: 3371
حَدَّثَنَا الْحُسَيْنُ بْنُ الْحَسَنِ الْمَرْوَزِيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا بْنُ أَبِي عَدِيٍّ . ح وحَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعِيدٍ الْجَوْهَرِيُّ،‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الْوَهَّابِ جَمِيعًا،‏‏‏‏ عَنْ رَاشِدٍ أَبِي مُحَمَّدٍ الْحِمَّانِيِّ،‏‏‏‏ عَنْ شَهْرِ بْنِ حَوْشَبٍ،‏‏‏‏ عَنْ أُمِّ الدَّرْدَاءِ،‏‏‏‏ عَنْ أَبِي الدَّرْدَاءِ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ أَوْصَانِي خَلِيلِي صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَلَا تَشْرَبْ الْخَمْرَ،‏‏‏‏ فَإِنَّهَا مِفْتَاحُ كُلِّ شَرٍّ.
ابو الدرداء (رض) کہتے ہیں کہ میرے خلیل (جگری دوست) رسول اللہ ﷺ نے مجھے وصیت فرمائی : شراب مت پیو، اس لیے کہ یہ تمام برائیوں کی کنجی ہے ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : «تفرد بہ ابن ماجہ، (تحفة الأشراف : ١٠٩٨٥، ومصباح الزجاجة : ١١٦٨) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎: آدمی ہر ایک برائی سے عقل کی وجہ سے بچتا ہے جب عقل ہوتی ہے تو اللہ کا خوف ہوتا ہے، شراب پینے سے عقل ہی میں فتور آجاتا ہے، پھر خوف کہاں رہا شرابی سے سینکڑوں گناہ سرزد ہوتے ہیں، اس لئے اس کو ام الخبائث کہتے ہیں، یعنی سب برائیوں کی جڑ۔
It was narrated that Abu Darda' said: "My close friend advised me: 'Do not drink wine, for it is the key to all evils.''' (Hasan)
Top