سنن ابنِ ماجہ - نماز کا بیان - 667
حدیث نمبر: 667
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ الصَّبَّاحِ، ‏‏‏‏‏‏ وَأَحْمَدُ بْنُ سِنَانٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالَا:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِسْحَاق بْنُ يُوسُفَ الْأَزْرَقُ، ‏‏‏‏‏‏أَنْبَأَنَا سُفْيَانُ . ح وَحَدَّثَنَاعَلِيُّ بْنُ مَيْمُونٍ الرَّقِّيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مَخْلَدُ بْنُ يَزِيدَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُفْيَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَلْقَمَةَ بْنِ مَرْثَدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُلَيْمَانَ بْنِ بُرَيْدَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ جَاءَ رَجُلٌ إِلَى النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَسَأَلَهُ عَنْ وَقْتِ الصَّلَاةِ؟ فَقَالَ:‏‏‏‏ صَلِّ مَعَنَا هَذَيْنِ الْيَوْمَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا زَالَتِ الشَّمْسُ أَمَر َبِلالا فَأَذَّنَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَمَرَهُ فَأَقَامَ الظُّهْرَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَمَرَهُ فَأَقَامَ الْعَصْرَ وَالشَّمْسُ مُرْتَفِعَةٌ بَيْضَاءُ نَقِيَّةٌ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَمَرَهُ فَأَقَامَ الْمَغْرِبَ حِينَ غَابَتِ الشَّمْسُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَمَرَهُ فَأَقَامَ الْعِشَاءَ حِينَ غَابَ الشَّفَقُ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَمَرَهُ فَأَقَامَ الْفَجْرَ حِينَ طَلَعَ الْفَجْرُ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا كَانَ مِنَ الْيَوْمِ الثَّانِي أَمَرَهُ فَأَذَّنَ الظُّهْرَ فَأَبْرَدَ بِهَا وَأَنْعَمَ أَنْ يُبْرِدَ بِهَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ صَلَّى الْعَصْرَ وَالشَّمْسُ مُرْتَفِعَةٌ أَخَّرَهَا فَوْقَ الَّذِي كَانَ، ‏‏‏‏‏‏فَصَلَّى الْمَغْرِبَ قَبْلَ أَنْ يَغِيبَ الشَّفَقُ، ‏‏‏‏‏‏وَصَلَّى الْعِشَاءَ بَعْدَ مَا ذَهَبَ ثُلُثُ اللَّيْلِ، ‏‏‏‏‏‏وَصَلَّى الْفَجْرَ فَأَسْفَرَ بِهَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ أَيْنَ السَّائِلُ عَنْ وَقْتِ الصَّلَاةِ؟ فَقَالَ الرَّجُلُ:‏‏‏‏ أَنَا يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَقْتُ صَلَاتِكُمْ بَيْنَ مَا رَأَيْتُمْ.
بریدہ (رض) کہتے ہیں کہ ایک آدمی نبی اکرم ﷺ کے پاس آیا، اور اس نے آپ سے نماز کے اوقات کے متعلق سوال کیا، تو آپ نے فرمایا : آنے والے دو دن ہمارے ساتھ نماز پڑھو، چناچہ (پہلے دن) جب سورج ڈھل گیا تو آپ ﷺ نے بلال (رض) کو حکم دیا، انہوں نے اذان دی، پھر ان کو حکم دیا تو انہوں نے ظہر کی اقامت کہی ١ ؎، پھر ان کو حکم دیا، انہوں نے نماز عصر کی اقامت کہی، اس وقت سورج بلند، صاف اور چمکدار تھا ٢ ؎، پھر جب سورج ڈوب گیا تو ان کو حکم دیا تو انہوں نے مغرب کی اقامت کہی، پھر جب شفق ٣ ؎ غائب ہوگئی تو انہیں حکم دیا، انہوں نے عشاء کی اقامت کہی، پھر جب صبح صادق طلوع ہوئی تو انہیں حکم دیا، تو انہوں نے فجر کی اقامت کہی، جب دوسرا دن ہوا تو آپ نے ان کو حکم دیا، تو انہوں نے ظہر کی اذان دی، اور ٹھنڈا کیا اس کو اور خوب ٹھنڈا کیا (یعنی تاخیر کی) ، پھر عصر کی نماز اس وقت پڑھائی جب کہ سورج بلند تھا، پہلے روز کے مقابلے میں دیر کی، پھر مغرب کی نماز شفق کے غائب ہونے سے پہلے پڑھائی، اور عشاء کی نماز تہائی رات گزر جانے کے بعد پڑھائی اور فجر کی نماز اجالے میں پڑھائی، پھر آپ ﷺ نے فرمایا : نماز کے اوقات کے بارے میں سوال کرنے والا کہاں ہے ؟ ، اس آدمی نے کہا : اللہ کے رسول ! میں حاضر ہوں، آپ ﷺ نے فرمایا : تمہاری نماز کا وقت ان اوقات کے درمیان ہے جو تم نے دیکھا ۔
تخریج دارالدعوہ : صحیح مسلم/المسا جد ٣١ (٦١٣) ، سنن الترمذی/الصلا ة ١ (١٥٢) ، سنن النسائی/المو اقیت ١٢ (٥٢٠) ، (تحفة الأشراف : ١٩٣١) ، وقد أخرجہ : مسند احمد (٥/٣٤٩) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎: پہلے روز سورج ڈھلتے ہی ظہر کی اذان دلوائی اور آپ نے ظہر کی نماز پڑھی اس سے معلوم ہوا کہ ظہر کا اول وقت زوال یعنی سورج ڈھلنے سے شروع ہوتا ہے۔ ٢ ؎: یعنی ابھی اس میں زردی نہیں آئی تھی ٣ ؎: شفق اس سرخی کو کہتے ہیں جو سورج ڈوب جانے کے بعد مغرب (پچھم) میں باقی رہتی ہے، اور عشاء سے ذرا پہلے تک برقرار رہتی ہے۔
It was narrated from Sulaimân bin Buraidah that his father said: “A man came to the Prophet ﷺ and asked him about the times of prayer. He said: ‘Pray with us for two days.’ When the sun passed its zenith he commanded Bilal (RA) to call the Adhãn, then he commanded him to give the Iqâmah for Zuhur’; then he commanded him to give the Iqamah for ‘Asr when the sun was high and clearly white. Then he commanded him to give the Iqamah for Maghrib when the sun had set; then he commanded him to give the Iqamah for ‘lsha’ when the red afterglow had disappeared; then he commanded him to give the lqdmah for Pajr when dawn came. On the folloaing day he commanded him to give the Adhan for Zuhr when the extreme heat had passed and it had cooled down; then he prayed ‘Ast when the sun was still high, but he delayed it more than he had done the day before; then he prayed Maghrib before the red afterglow disappeared; he prayed ‘Isha’ when one-third of the night had passed; and he prayed Fajr at the time when it was already light. Then he said: ‘Where is the one who was asking about the times of Prayer?’ The man said: ‘Here I am, O Messenger of Allah.’ He said: ‘The times of your prayer axe between the times you have seen.’” (Sahih)
Top