سنن النسائی - پانیوں کا بیان - 328
أَخْبَرَنَا سُوَيْدُ بْنُ نَصْرٍ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ الْمُبَارَكِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سُفْيَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سِمَاكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عِكْرِمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ ابْنِ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ بَعْضَ أَزْوَاجِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ اغْتَسَلَتْ مِنَ الْجَنَابَةِ، ‏‏‏‏‏‏فَتَوَضَّأَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ بِفَضْلِهَا، ‏‏‏‏‏‏فَذَكَرَتْ ذَلِكَ لَهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ إِنَّ الْمَاءَ لَا يُنَجِّسُهُ شَيْءٌ.
عبداللہ بن عباس رضی اللہ عنہم سے روایت ہے کہ نبی اکرم کی ایک بیوی نے غسل جنابت کیا، تو آپ نے اس کے بچے ہوئے پانی سے وضو کیا، اس نے آپ سے اس کا ذکر کیا، تو آپ نے فرمایا : پانی کو کوئی چیز ناپاک نہیں کرتی ہے ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/الطھارة ٣٥ (٦٨) ، سنن الترمذی/فیہ ٤٨ (٦٥) ، سنن ابن ماجہ/فیہ ٣٣ (٣٧٠) ، (تحفة الأشراف ٦١٠٣) ، مسند احمد ١/٢٣٥، ٢٨٤، ٣٠٨، ٣٣٧، سنن الدارمی/الطہارة ٥٧(٧٦١، ٧٦٢) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎: یعنی جو پانی جنبی یا محدث کے استعمال سے بچ جائے، وہ استعمال کرنے والے کی جنابت یا حدث کی وجہ سے نجس نہیں ہوتا۔
قال الشيخ الألباني : صحيح
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني : حديث نمبر 325
It was narrated from Ibn ‘Abbas that one of the wives of the Prophet ﷺ performed Ghusl from Janabah, and the Prophet ﷺ performed Wudu with her leftover water. She mentioned that to him and he said: “Water is not made impure by anything.” (Da`if)
Top