سنن النسائی - زینت (آرائش) سے متعلق احادیت مبارکہ - 5060
أَخْبَرَنَا إِسْحَاق بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا وَكِيعٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا زَكَرِيَّا بْنُ أَبِي زَائِدَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُصْعَبِ بْنِ شَيْبَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ طَلْقِ بْنِ حَبِيبٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ الزُّبَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ رَسُولِ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ عَشْرَةٌ مِنَ الْفِطْرَةِ:‏‏‏‏ قَصُّ الشَّارِبِ، ‏‏‏‏‏‏وَقَصُّ الْأَظْفَارِ، ‏‏‏‏‏‏وَغَسْلُ الْبَرَاجِمِ، ‏‏‏‏‏‏وَإِعْفَاءُ اللِّحْيَةِ، ‏‏‏‏‏‏وَالسِّوَاكُ، ‏‏‏‏‏‏وَالِاسْتِنْشَاقُ، ‏‏‏‏‏‏وَنَتْفُ الْإِبْطِ، ‏‏‏‏‏‏وَحَلْقُ الْعَانَةِ، ‏‏‏‏‏‏وَانْتِقَاصُ الْمَاءِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ مُصْعَبٌ:‏‏‏‏ وَنَسِيتُ الْعَاشِرَةَ إِلَّا أَنْ تَكُونَ:‏‏‏‏ الْمَضْمَضَةَ.
ام المؤمنین عائشہ رضی اللہ عنہا سے روایت ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا : دس چیزیں فطرت ٢ ؎ (انبیاء کی سنت) ہیں (جو ہمیشہ سے چلی آرہی ہیں) : مونچھیں کتروانا، ناخن کاٹنا، انگلیوں کے پوروں اور جوڑوں کو دھونا، ڈاڑھی کا چھوڑنا، مسواک کرنا، ناک میں پانی ڈالنا، بغل کے بال اکھیڑنا، ناف کے نیچے کے بال صاف کرنا، استنجاء کرنا ۔ مصعب بن شبیہ کہتے ہیں : دسویں بات میں بھول گیا، شاید وہ کلی کرنا ہو ۔
تخریج دارالدعوہ : صحیح مسلم/الطھارة ١٦ (٢٦١) ، سنن ابی داود/الطھارة ٢٩ (٥٣) ، سنن الترمذی/الأدب ١٤ (٢٧٥٧) ، سنن ابن ماجہ/الطھارة ٨ (٢٩٣) ، (تحفة الأشراف : ١٦١٨٨، ١٨٨٥٠) ، مسند احمد (١٣٧٦) (حسن) (اس کے راوی ” مصعب “ ضعیف ہیں لیکن شواہد سے تقویت پاکر یہ روایت حسن ہے )
وضاحت : ١ ؎: عنوان کتاب : «کتاب الزین ۃ من السنن» ہے، یعنی یہ احادیث سنن کبریٰ سے ماخوذ ہیں، جن کے نمبرات کا حوالہ ہم نے ہر حدیث کے آخر میں دے دیا ہے، اس کے بعد دوسرا عنوان : «کتاب الزین ۃ من المجتبیٰ» ہے، یعنی اب یہاں سے منتخب ابواب ہوں گے جو ظاہر ہے کہ سنن کبریٰ سے ماخوذ ہوں گے یا مؤلف کے جدید اضافے ہوں گے، اس تنبیہ کی ضرورت اس واسطے ہوئی کہ مولانا عطاء اللہ حنیف بھوجیانی کے نسخے میں عنوان کتاب صحیح آیا ہے، اور مولانا نے اس پر حاشیہ لکھ کر یہ واضح کردیا ہے کہ اس کتاب میں یہ ابواب سنن کبریٰ سے منقول ہیں، لیکن مولانا وحیدالزماں کے مترجم نسخے میں «کتاب الزین ۃ : باب من السنن الفطر ۃ » مطبوع ہے، اور حدیث کے ترجمہ میں آیا ہے : دس باتیں پیدائشی سنت ہیں (یعنی ہمیشہ سے چلی آتی ہیں، سب نبیوں نے اس کا حکم کیا) ( ٣ /٤٥٥) اور اس کا ترجمہ کتاب آرائش کے بیان میں ، پھر نیچے پیدائشی سنتیں لکھا ہے، اور مشہور حسن کے نسخے میں «کتاب الزین ۃ من السنن الفطر ۃ » مطبوع ہے، جب کہ «من السنن» کا تعلق «کتاب الزین ۃ » سے ہے۔ ٢ ؎: اکثر علماء نے فطرت کی تفسیر سنت سے کی ہے، گویا یہ خصلتیں انبیاء کی سنت ہیں جن کی اقتداء کا حکم اللہ تعالیٰ نے ہمیں اپنے قول : «فبهداهم اقتده» (سورة الأنعام : 90) میں دیا ہے، بعض علماء اس کی تفسیر فطرت ہی سے کرتے ہیں، یعنی یہ سب کام انسانی فطرت کے ہیں جس پر انسان کی خلقت ہوئی ہے، بعض علماء دونوں باتوں کو ملا کر یوں تفسیر کرتے ہیں کہ یہ سب حقیقی انسانی فطرت کے کام ہیں اسی لیے ان کو انبیاء (علیہم السلام) نے اپنایا ہے۔
قال الشيخ الألباني : حسن
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني : حديث نمبر 5040
It was narrated from 'Aishah (RA) that: The Messenger of Allah (صلی اللہ علیہ وسلم) said: "Ten things are part of the Fitrah: Trimming the mustache, trimming the nails, washing the joints, letting the beard grow, using the Siwak, rinsing the nose, plucking the armpit hairs, shaving the pubes, and washing with water (after relieving oneself)." Mus'ab bin Shaibah said: "I have forgotten the tenth, unless it was rinsing the mouth.
Top