سنن النسائی - عیدین سے متعلقہ احادیث کی کتاب - 1561
أَخْبَرَنَا عَلِيُّ بْنُ حُجْرٍ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا إِسْمَاعِيلُ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا حُمَيْدٌ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ كَانَ لِأَهْلِ الْجَاهِلِيَّةِ يَوْمَانِ فِي كُلِّ سَنَةٍ يَلْعَبُونَ فِيهِمَا،‏‏‏‏ فَلَمَّا قَدِمَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ الْمَدِينَةَ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ لَكُمْ يَوْمَانِ تَلْعَبُونَ فِيهِمَا،‏‏‏‏ وَقَدْ أَبْدَلَكُمُ اللَّهُ بِهِمَا خَيْرًا مِنْهُمَا يَوْمَ الْفِطْرِ وَيَوْمَ الْأَضْحَى.
انس بن مالک (رض) کہتے ہیں کہ جاہلیت کے لوگوں کے لیے سال میں دو دن ایسے ہوتے تھے جن میں وہ کھیل کود کیا کرتے تھے، جب نبی اکرم (مکہ سے ہجرت کر کے) مدینہ آئے تو آپ نے فرمایا : تمہارے لیے دو دن تھے جن میں تم کھیل کود کیا کرتے تھے (اب) اللہ تعالیٰ نے تمہیں ان کے بدلہ ان سے بہتر دو دن دے دیئے ہیں : ایک عید الفطر کا دن اور دوسرا عید الاضحی کا دن ۔
تخریج دارالدعوہ : تفرد بہ النسائي، (تحفة الأشراف : ٥٩٣) ، وقد أخرجہ : سنن ابی داود/الصلاة ٢٤٥ (١١٣٤) ، مسند احمد ٣/١٠٣، ١٧٨، ٢٣٥، ٢٥٠ (صحیح )
قال الشيخ الألباني : صحيح
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني : حديث نمبر 1556
It was narrated that 'Anas bin Malik (RA) said: "The people of the Jahiliyyah had two days each year when they would play. When the Messenger of Allah (صلی اللہ علیہ وسلم) came to Al-Madinah he said: 'You had two days when you would play, but Allah (SWT) has given Muslims something instead that is better than them: the day of Al-Fitr and the day of Al-Adha.'"
Top