سنن النسائی - نماز کا بیان - 451
أَخْبَرَنَا يَعْقُوبُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا هِشَامٌ الدَّسْتَوَائِيُّ، ‏‏‏‏‏‏قال:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا قَتَادَةُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَنَسِ بْنِ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مَالِكِ بْنِ صَعْصَعَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنّ النَّبِيَّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ بَيْنَا أَنَا عِنْدَ الْبَيْتِ بَيْنَ النَّائِمِ وَالْيَقْظَانِ، ‏‏‏‏‏‏إِذْ أَقْبَلَ أَحَدُ الثَّلَاثَةِ بَيْنَ الرَّجُلَيْنِ، ‏‏‏‏‏‏فَأُتِيتُ بِطَسْتٍ مِنْ ذَهَبٍ مَلْآنَ حِكْمَةً وَإِيمَانًا فَشَقَّ مِنَ النَّحْرِ إِلَى مَرَاقِّ الْبَطْنِ فَغَسَلَ الْقَلْبَ بِمَاءِ زَمْزَمَ ثُمَّ مُلِئَ حِكْمَةً وَإِيمَانًا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أُتِيتُ بِدَابَّةٍ دُونَ الْبَغْلِ وَفَوْقَ الْحِمَارِ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ انْطَلَقْتُ مَعَ جِبْرِيلَ عَلَيْهِ السَّلَام فَأَتَيْنَا السَّمَاءَ الدُّنْيَا، ‏‏‏‏‏‏فَقِيلَ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ جِبْرِيلُ، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ وَمَنْ مَعَكَ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ مُحَمَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ وَقَدْ أُرْسِلَ إِلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏مَرْحَبًا بِهِ وَنِعْمَ الْمَجِيءُ جَاءَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى آدَمَ عَلَيْهِ السَّلَام فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِكَ مِنَ ابْنٍ وَنَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَتَيْنَا السَّمَاءَ الثَّانِيَةَ، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ جِبْرِيلُ، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ وَمَنْ مَعَكَ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ مُحَمَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏فَمِثْلُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏وَعِيسَى فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِمَا، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَا:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِكَ مِنْ أَخٍ وَنَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَتَيْنَا السَّمَاءَ الثَّالِثَةَ، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ مَنْ هَذَا ؟ قَالَ:‏‏‏‏ جِبْرِيلُ، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ وَمَنْ مَعَكَ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ مُحَمَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏فَمِثْلُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى يُوسُفَ عَلَيْهِ السَّلَام فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِكَ مِنْ أَخٍ وَنَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَتَيْنَا السَّمَاءَ الرَّابِعَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَمِثْلُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى إِدْرِيسَ عَلَيْهِ السَّلَام فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِكَ مِنْ أَخٍ وَنَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَتَيْنَا السَّمَاءَ الْخَامِسَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَمِثْلُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى هَارُونَ عَلَيْهِ السَّلَام فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِكَ مِنْ أَخٍ وَنَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَتَيْنَا السَّمَاءَ السَّادِسَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَمِثْلُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَتَيْتُ عَلَى مُوسَى عَلَيْهِ السَّلَام فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِكَ مِنْ أَخٍ وَنَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏فَلَمَّا جَاوَزْتُهُ بَكَى، ‏‏‏‏‏‏قِيلَ:‏‏‏‏ مَا يُبْكِيكَ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ يَا رَبِّ، ‏‏‏‏‏‏هَذَا الْغُلَامُ الَّذِي بَعَثْتَهُ بَعْدِي يَدْخُلُ مِنْ أُمَّتِهِ الْجَنَّةَ أَكْثَرُ وَأَفْضَلُ مِمَّا يَدْخُلُ مِنْ أُمَّتِي، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ أَتَيْنَا السَّمَاءَ السَّابِعَةَ، ‏‏‏‏‏‏فَمِثْلُ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى إِبْرَاهِيمَ عَلَيْهِ السَّلَام، ‏‏‏‏‏‏فَسَلَّمْتُ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَرْحَبًا بِكَ مِنَ ابْنٍ وَنَبِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ رُفِعَ لِي الْبَيْتُ الْمَعْمُورُ، ‏‏‏‏‏‏فَسَأَلْتُ جِبْرِيلَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ هَذَا الْبَيْتُ الْمَعْمُورُ يُصَلِّي فِيهِ كُلَّ يَوْمٍ سَبْعُونَ أَلْفَ مَلَكٍ فَإِذَا خَرَجُوا مِنْهُ لَمْ يَعُودُوا فِيهِ آخِرَ مَا عَلَيْهِمْ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ رُفِعَتْ لِي سِدْرَةُ الْمُنْتَهَى فَإِذَا نَبْقُهَا مِثْلُ قِلَالِ هَجَرٍ وَإِذَا وَرَقُهَا مِثْلُ آذَانِ الْفِيَلَةِ وَإِذَا فِي أَصْلِهَا أَرْبَعَةُ أَنْهَارٍ نَهْرَانِ بَاطِنَانِ وَنَهْرَانِ ظَاهِرَانِ، ‏‏‏‏‏‏فَسَأَلْتُ جِبْرِيلَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَمَّا الْبَاطِنَانِ فَفِي الْجَنَّةِ وَأَمَّا الظَّاهِرَانِ فَالْفُرَاتُ وَالنَّيْل، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ فُرِضَتْ عَلَيَّ خَمْسُونَ صَلَاةً فَأَتَيْتُ عَلَى مُوسَى، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا صَنَعْتَ ؟ قُلْتُ:‏‏‏‏ فُرِضَتْ عَلَيَّ خَمْسُونَ صَلَاةً، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنِّي أَعْلَمُ بِالنَّاسِ مِنْكَ، ‏‏‏‏‏‏إِنِّي عَالَجْتُ بَنِي إِسْرَائِيلَ أَشَدَّ الْمُعَالَجَةِ وَإِنَّ أُمَّتَكَ لَنْ يُطِيقُوا ذَلِكَ فَارْجِعْ إِلَى رَبِّكَ فَاسْأَلْهُ أَنْ يُخَفِّفَ عَنْكَ، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعْتُ إِلَى رَبِّي فَسَأَلْتُهُ أَنْ يُخَفِّفَ عَنِّي فَجَعَلَهَا أَرْبَعِينَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ رَجَعْتُ إِلَى مُوسَى عَلَيْهِ السَّلَام، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ مَا صَنَعْتَ ؟ قُلْتُ:‏‏‏‏ جَعَلَهَا أَرْبَعِينَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لِي مِثْلَ مَقَالَتِهِ الْأُولَى، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعْتُ إِلَى رَبِّي عَزَّ وَجَلَّ فَجَعَلَهَا ثَلَاثِينَ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى مُوسَى عَلَيْهِ السَّلَام فَأَخْبَرْتُهُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لِي مِثْلَ مَقَالَتِهِ الْأُولَى، ‏‏‏‏‏‏فَرَجَعْتُ إِلَى رَبِّي فَجَعَلَهَا عِشْرِينَ ثُمَّ عَشْرَةً ثُمَّ خَمْسَةً، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَيْتُ عَلَى مُوسَى عَلَيْهِ السَّلَام، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لِي مِثْلَ مَقَالَتِهِ الْأُولَى، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ:‏‏‏‏ إِنِّي أَسْتَحِي مِنْ رَبِّي عَزَّ وَجَلَّ أَنْ أَرْجِعَ إِلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏فَنُودِيَ أَنْ قَدْ أَمْضَيْتُ فَرِيضَتِي وَخَفَّفْتُ عَنْ عِبَادِي وَأَجْزِي بِالْحَسَنَةِ عَشْرَ أَمْثَالِهَا.
انس بن مالک، مالک بن صعصعہ (رض) سے روایت کرتے ہیں کہ نبی اکرم نے فرمایا : میں کعبہ کے پاس نیم خواب اور نیم بیداری میں تھا کہ اسی دوران میرے پاس تین (فرشتے) آئے، ان تینوں میں سے ایک جو دو کے بیچ میں تھا میری طرف آیا، اور میرے پاس حکمت و ایمان سے بھرا ہوا سونے کا ایک طشت لایا گیا، تو اس نے میرا سینہ حلقوم سے پیٹ کے نچلے حصہ تک چاک کیا، اور دل کو آب زمزم سے دھویا، پھر وہ حکمت و ایمان سے بھر دیا گیا، پھر میرے پاس خچر سے چھوٹا اور گدھے سے بڑا ایک جانور لایا گیا، میں جبرائیل (علیہ السلام) کے ساتھ چلا، تو ہم آسمان دنیا پر آئے، تو پوچھا گیا کون ہو ؟ انہوں نے کہا : جبرائیل ہوں، پوچھا گیا آپ کے ساتھ کون ہیں ؟ انہوں نے کہا : محمد ہیں، پوچھا گیا : کیا بلائے گئے ہیں ؟ مرحبا مبارک ہو ان کی تشریف آوری، پھر میں آدم (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور میں نے انہیں سلام کیا، انہوں نے کہا : خوش آمدید تمہیں اے بیٹے اور نبی ! پھر ہم دوسرے آسمان پر آئے، پوچھا گیا : کون ہو ؟ انہوں نے کہا : جبرائیل ہوں، پوچھا گیا : آپ کے ساتھ کون ہیں ؟ انہوں نے کہا : محمد ہیں، یہاں بھی اسی طرح ہوا، یہاں میں عیسیٰ (علیہ السلام) اور یحییٰ (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور میں نے ان دونوں کو سلام کیا، ان دونوں نے کہا : خوش آمدید تمہیں اے بھائی اور نبی ! پھر ہم تیسرے آسمان پر آئے، پوچھا گیا کون ہو ؟ انہوں نے کہا : جبرائیل ہوں، پوچھا گیا : آپ کے ساتھ کون ہیں ؟ انہوں نے کہا : محمد ہیں، یہاں بھی اسی طرح ہوا، یہاں میں یوسف (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور میں نے انہیں سلام کیا، انہوں نے کہا : خوش آمدید تمہیں اے بھائی اور نبی ! پھر ہم چوتھے آسمان پر آئے، وہاں بھی اسی طرح ہوا، یہاں میں ادریس (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور میں نے انہیں سلام کیا، انہوں نے کہا : خوش آمدید تمہیں اے بھائی اور نبی ! پھر ہم پانچویں آسمان پر آئے، یہاں بھی ویسا ہی ہوا، میں ہارون (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور میں نے انہیں سلام کیا، انہوں نے کہا : خوش آمدید تمہیں اے بھائی، اور نبی ! پھر ہم چھٹے آسمان پر آئے، یہاں بھی ویسا ہی ہوا، تو میں موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور میں نے انہیں سلام کیا، انہوں نے کہا : خوش آمدید تمہیں اے بھائی اور نبی ! تو جب میں ان سے آگے بڑھا، تو وہ رونے لگے ١ ؎، ان سے پوچھا گیا آپ کو کون سی چیز رلا رہی ہے ؟ انہوں نے کہا : پروردگار ! یہ لڑکا جسے تو نے میرے بعد بھیجا ہے اس کی امت سے جنت میں داخل ہونے والے لوگ میری امت کے داخل ہونے والے لوگوں سے زیادہ اور افضل ہوں گے، پھر ہم ساتویں آسمان پر آئے، یہاں بھی ویسا ہی ہوا، تو میں ابراہیم (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور میں نے انہیں سلام کیا، انہوں نے کہا : خوش آمدید تمہیں اے بیٹے اور نبی ! پھر بیت معمور ٢ ؎ میرے قریب کردیا گیا، میں نے (اس کے متعلق) جبرائیل سے پوچھا تو انہوں نے کہا : یہ بیت معمور ہے، اس میں روزانہ ستر ہزار فرشتے نماز ادا کرتے ہیں، جب وہ اس سے نکلتے ہیں تو پھر دوبارہ اس میں واپس نہیں ہوتے، یہی ان کا آخری داخلہ ہوتا ہے، پھر سدرۃ المنتھی میرے قریب کردیا گیا، اس کے بیر ہجر کے مٹکوں جیسے، اور اس کے پتے ہاتھی کے کان جیسے تھے، اور اس کی جڑ سے چار نہریں نکلی ہوئی تھی، دو نہریں باطنی ہیں، اور دو ظاہری، میں نے جبرائیل سے پوچھا، تو انہوں نے کہا : باطنی نہریں تو جنت میں ہیں، اور ظاہری نہریں فرات اور نیل ہیں، پھر میرے اوپر پچاس وقت کی نمازیں فرض کی گئیں، میں لوٹ کر موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس آیا، تو انہوں نے پوچھا : آپ نے کیا کیا ؟ میں نے کہا : میرے اوپر پچاس نمازیں فرض کی گئیں ہیں، انہوں نے کہا : میں لوگوں کو آپ سے زیادہ جانتا ہوں، میں بنی اسرائیل کو خوب جھیل چکا ہوں، آپ کی امت اس کی طاقت بالکل نہیں رکھتی، اپنے رب کے پاس واپس جایئے، اور اس سے گزارش کیجئیے کہ اس میں تخفیف کر دے، چناچہ میں اپنے رب کے پاس واپس آیا، اور میں نے اس سے تخفیف کی گزارش کی، تو اللہ تعالیٰ نے چالیس نمازیں کردیں، پھر میں موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس واپس آیا، انہوں نے پوچھا : آپ نے کیا کیا ؟ میں نے کہا : اللہ تعالیٰ نے انہیں چالیس کردی ہیں، پھر انہوں نے مجھ سے وہی بات کہی جو پہلی بار کہی تھی، تو میں پھر اپنے رب عزوجل کے پاس واپس آیا، تو اللہ تعالیٰ نے انہیں تیس کردیں، پھر میں موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس آیا، اور انہیں اس کی خبر دی، تو انہوں نے پھر وہی بات کہی جو پہلے کہی تھی، تو میں اپنے رب کے پاس واپس گیا، تو اس نے انہیں بیس پھر دس اور پھر پانچ کردیں، پھر میں موسیٰ (علیہ السلام) کے پاس آیا، تو انہوں نے پھر وہی بات کہی جو پہلے کہی تھی، تو میں نے کہا : (اب مجھے) اپنے رب عزوجل کے پاس (باربار) جانے سے شرم آرہی ہے، تو آواز آئی : میں نے اپنا فریضہ نافذ کردیا ہے، اور اپنے بندوں سے تخفیف کردی ہے، اور میں نیکی کا بدلہ دس گنا دیتا ہوں ۔
تخریج دارالدعوہ : صحیح البخاری/بدء الخلق ٦ (٣٢٠٧) ، أحادیث الأنبیاء ٢٢ (٣٣٩٣) ، ٤٢ (٣٤٣٠) ، مناقب الأنصار ٤٢ (٣٨٨٧) ، صحیح مسلم/الإیمان ٧٤ (١٦٤) ، سنن الترمذی/تفسیر سورة الم نشرح (٣٣٤٦) (مختصراً ، وقال : في الحدیث قصة طویلة) ، (تحفة الأشراف : ١١٢٠٢) ، مسند احمد ٢/٢٠٧، ٢٠٨، ٢١٠ (صحیح )
وضاحت : ١ ؎: موسیٰ (علیہ السلام) کا یہ رونا حسد کے طور پر نہیں تھا، بلکہ یہ بطور تاسف و رنج تھا کہ میری امت نے میری ایسی پیروی نہیں کی جیسی محمد ﷺ کی ان کی امت نے کی۔ ٢ ؎: بیت معمور خانہ کعبہ کے عین اور ساتویں آسمان پر ایک عبادت خانہ ہے جہاں فرشتے بہت بڑی تعداد میں عبادت کرتے ہیں۔ ٣ ؎: سدرۃ المنتھی بیری کا وہ درخت جو ساتویں آسمان پر ہے، اور جس سے آگے کوئی نہیں جاسکتا۔ ٤ ؎: ان دونوں سے مراد جنت کی دونوں نہریں کوثر اور سلسبیل ہیں۔
قال الشيخ الألباني : صحيح
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني : حديث نمبر 448
It was narrated from Anas bin Malik (RA), from Malik bin Sa’ that the Prophet ﷺ said: “While I was at the Ka’bah, in a state between sleep and wakefulness, three men came, and one of them who was in the middle came toward me. I was brought a basin of gold, filled with wisdom and faith, and he slit open from the throat to the lower abdomen, and washed the heart with Zamzam water, then — “it was filled with wisdom and faith. Then I was brought a riding-beast, smaller than a mule and bigger than a donkey. I set off with Jibril, peace be upon him, and we came to the lowest heaven. It was said: ‘Who is this?’ He said: ‘Jibril.’ It was said: “Who is with you?’ He said: ‘Muhammad.’ It was said: ‘Has (revelation) been sent to him? Welcome to him, what an excellent visit his is.’ I came to Adam, peace be upon him, and greeted him, and he said: ‘Welcome to you! What an excellent son and Prophet.’ Then we came to the second heaven and it was said: ‘Who is this?’ He said: ‘Jibra’il.’ It was said: ‘Who is with you?’ he said: ‘Muhammad.’ And the same exchange took place. I came to Yahya and ‘Eisa, peace be upon them both, and greeted them, and they said: ‘Welcome to you! What an excellent brother and Prophet.’ Then we came to the third heaven and it was said: ‘Who is this?’ He said: ‘Jibra’il.’ It was said: ‘Who is with you?’ He said: ‘Muhammad.’ And the same exchange took place. I came to Yasuf, peace be upon him, and greeted him, and he said: ‘Welcome to you! What an excellent brother and Prophet.’ Then we came to the fourth heaven and the same exchange took place. I came to Idris, peace be upon him, and greeted him, and he said: ‘Welcome to you! What an excellent brother and Prophet.’ Then we came to the fifth heaven and the same exchange took place. I came to Harun, peace be upon him, and greeted him, and he said: ‘Welcome to you! What an excellent brother and Prophet.’ Then we came to the sixth heaven and the same exchange took place. I came to Musa, peace be upon him, and greeted him, and he said: ‘Welcome to you! What an excellent brother and Prophet.’ When I passed him, he wept, and it was said: ‘Why are you weeping?’ He said: ‘Lord, this young man whom You have sent after me, more of his Ummah will enter Paradise than from my nation, and they will be more virtuous than them.’ Then we came to the seventh heaven and a similar exchange took place. I came to Ibrahim, peace be upon him, and greeted him, and he said: ‘Welcome to you! What an excellent son and Prophet.’ Then I was taken up to the Oft-Frequented House (Ad-Bait al Ma’mur) and I asked Jibra’il about it, and he said: ‘This is Al-Bait a! Ma’mur in which seventy thousand angels pray every day, and when they leave it they never come back.’ Then I was taken up to Sidrah Al Muntaha (the Lote-Tree of the Utmost Boundary). Its fruits were like the Qilal of Hajar and its leaves were like the ears of elephants. At its base were four rivers: Two hidden rivers and two manifest rivers. I asked Jibril (about them) and he said: ‘The two hidden ones are in Paradise, and the two manifest ones are the Euphrates and the Nile.’ Then fifty prayers were enjoined upon me. I came to Musaand he said: ‘What happened?’ I said: ‘Fifty prayers have been enjoined upon me.’ He said: ‘I know more about the people than you. I tried hard with the Children of Israel. Your Ummah will never be able to bear that. Go back to your Lord and ask Him to reduce it for you.’ So I went back to my Lord and asked Him to reduce it, and He made it forty. Then I went back to Musa, peace be upon him, and he said: ‘What happened?’ I said: ‘He made it forty.’ He said to me something similar to what he said the first time, so I went back to my Lord and He made it thirty. I came to Musa, peace be upon him, and told him, and he said to me something similar to what he said the first time, so I went back to my Lord and he made it twenty, then ten, then five. I came to Musa, peace be upon him, and he said to me something like he had said the first time, but I said: ‘I feel too shy before my Lord to go back to Him.’ Then it was called out: ‘I have decreed (the reward for) My obligation, and I have reduced the burden for My slaves, and I will give a ten-fold reward for each good deed.”
Top