سنن النسائی - کتاب ایمان اور اس کے ارکان - 5005
حَدَّثَنَا أَبُو عَبْدِ الرَّحْمَنِ أَحْمَدُ بْنُ شُعَيْبٍ مِنْ لَفْظِهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَنْبَأَنَا عَمْرُو بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّحْمَنِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ حَدَّثَنَا إِبْرَاهِيمُ بْنُ سَعْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ الزُّهْرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ سَعِيدِ بْنِ الْمُسَيِّبِ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ سُئِلَ:‏‏‏‏ أَيُّ الْأَعْمَالِ أَفْضَلُ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ الْإِيمَانُ بِاللَّهِ وَرَسُولِهِ.
ابوہریرہ (رض) سے روایت ہے کہ رسول اللہ سے پوچھا گیا : سب سے بہتر عمل کون سا ہے ؟ آپ نے فرمایا : اللہ اور اس کے رسول پر ایمان لانا ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : صحیح البخاری/الإیمان ١٨ (٢٦) ، الحج ٤(١٥١٩) ، صحیح مسلم/الإیمان ٣٦ (٨٣) ، (تحفة الأشراف : ١٣١٠١) ، مسند احمد (٢/٢٦٤، ٢٨٧، ٣٤٨، ٣٨٨، ٥٣١) ، سنن الدارمی/الجہاد ٤ (٢٤٣٨) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎: ایمان کے لغوی معنیٰ تصدیق کے ہیں اور شرع کی اصطلاح میں ایمان یہ ہے : زبان سے اقرار، دل سے تصدیق اور اعضاء وجوارح سے عمل کرنا، نیز ایمان کا طاعت و فرمانبرداری سے بڑھنا اور عصیان و نافرمانی سے گھٹنا سلف کا عقیدہ ہے۔ اور ایمان سب سے بہتر عمل اس لیے ہے کہ تمام اچھے اور نیک اعمال و افعال کا دارومدار ایمان ہی پر ہے، اگر ایمان نہیں ہے تو کوئی بھی نیک عمل مقبول نہیں ہوگا، بہت سی احادیث میں مختلف اعمال کو «أفضل عمل» سب سے اچھا کام ) بتایا گیا ہے، تو ( ایمان کے بعد ) پوچھنے والے یا پوچھے جانے کے وقت کے خاص حالات اور پس منظر کے لحاظ سے جواب دیا گیا ہے۔
قال الشيخ الألباني : صحيح
صحيح وضعيف سنن النسائي الألباني : حديث نمبر 4985
It was narrated from Abu Hurairah (RA) that: The Messenger of Allah (صلی اللہ علیہ وسلم) was asked: "Which deed is best?" "He said: Faith in Allah [SWT] and His messenger (صلی اللہ علیہ وسلم).
Top