سنن الترمذی - دیت کا بیان - 1419
حدیث نمبر: 1386
حَدَّثَنَا عَلِيُّ بْنُ سَعِيدٍ الْكِنْدِيُّ الْكُوفِيُّ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنَا ابْنُ أَبِي زَائِدَةَ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَجَّاجِ،‏‏‏‏ عَنْ زَيْدِ بْنِ جُبَيْرٍ،‏‏‏‏ وعَنْ خَشْفِ بْنِ مَالِكٍ،‏‏‏‏ قَال:‏‏‏‏ سَمِعْتُ ابْنَ مَسْعُودٍ،‏‏‏‏ قَالَ:‏‏‏‏ قَضَى رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فِي دِيَةِ الْخَطَإِ عِشْرِينَ بِنْتَ مَخَاضٍ،‏‏‏‏ وَعِشْرِينَ بَنِي مَخَاضٍ ذُكُورًا،‏‏‏‏ وَعِشْرِينَ بِنْتَ لَبُونٍ،‏‏‏‏ وَعِشْرِينَ جَذَعَةً،‏‏‏‏ وَعِشْرِينَ حِقَّةً . قَالَ:‏‏‏‏ وَفِي الْبَاب،‏‏‏‏ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرٍو،‏‏‏‏ أَخْبَرَنَا أَبُو هِشَامٍ الرِّفَاعِيُّ،‏‏‏‏ أَخْبَرَنَا ابْنُ أَبِي زَائِدَةَ،‏‏‏‏ وَأَبُو خَالِدٍ الْأَحْمَرُ،‏‏‏‏ عَنْ الْحَجَّاجِ بْنِ أَرْطَاةَ نَحْوَهُ. قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ حَدِيثُ ابْنِ مَسْعُودٍ لَا نَعْرِفُهُ مَرْفُوعًا،‏‏‏‏ إِلَّا مِنْ هَذَا الْوَجْهِ،‏‏‏‏ وَقَدْ رُوِيَ عَنْ عَبْدِ اللَّهِ مَوْقُوفًا،‏‏‏‏ وَقَدْ ذَهَبَ بَعْضُ أَهْلِ الْعِلْمِ إِلَى هَذَا،‏‏‏‏ وَهُوَ قَوْلُ:‏‏‏‏ أَحْمَدَ،‏‏‏‏ وَإِسْحَاق،‏‏‏‏ وَقَدْ أَجْمَعَ أَهْلُ الْعِلْمِ عَلَى أَنَّ الدِّيَةَ تُؤْخَذُ فِي ثَلَاثِ سِنِينَ،‏‏‏‏ فِي كُلِّ سَنَةٍ ثُلُثُ الدِّيَةِ،‏‏‏‏ وَرَأَوْا أَنَّ دِيَةَ الْخَطَإِ عَلَى الْعَاقِلَةِ،‏‏‏‏ وَرَأَى بَعْضُهُمْ أَنَّ الْعَاقِلَةَ قَرَابَةُ الرَّجُلِ مِنْ قِبَلِ أَبِيهِ،‏‏‏‏ وَهُوَ قَوْلُ:‏‏‏‏ مَالِكٍ،‏‏‏‏ وَالشَّافِعِيِّ،‏‏‏‏ وقَالَ بَعْضُهُمْ:‏‏‏‏ إِنَّمَا الدِّيَةُ عَلَى الرِّجَالِ دُونَ النِّسَاءِ وَالصِّبْيَانِ مِنَ الْعَصَبَةِ،‏‏‏‏ يُحَمَّلُ كُلُّ رَجُلٍ مِنْهُمْ رُبُعَ دِينَارٍ،‏‏‏‏ وَقَدْ قَالَ بَعْضُهُمْ:‏‏‏‏ إِلَى نِصْفِ دِينَارٍ،‏‏‏‏ فَإِنْ تَمَّتِ الدِّيَةُ،‏‏‏‏ وَإِلَّا نُظِرَ إِلَى أَقْرَبِ الْقَبَائِلِ مِنْهُمْ فَأُلْزِمُوا ذَلِكَ.
عبداللہ بن مسعود (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ نے حکم فرمایا : قتل خطا ١ ؎ کی دیت ٢ ؎ بیس بنت مخاض ٣ ؎، بیس ابن مخاض، بیس بنت لبون ٤ ؎، بیس جذعہ ٥ ؎ اور بیس حقہ ٦ ؎ ہے ۔ ہم کو ابوہشام رفاعی نے ابن ابی زائدہ اور ابوخالد احمر سے اور انہوں نے حجاج بن ارطاۃ سے اسی طرح کی حدیث بیان کی۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - ابن مسعود (رض) کی حدیث کو ہم صرف اسی سند سے مرفوع جانتے ہیں اور عبداللہ بن مسعود سے یہ حدیث موقوف طریقہ سے بھی آئی ہے، ٢ - اس باب میں عبداللہ بن عمرو (رض) سے بھی روایت ہے، ٣ - بعض اہل علم کا یہی مسلک ہے، احمد اور اسحاق بن راہویہ کا بھی یہی قول ہے، ٤ - اہل علم کا اس بات پر اتفاق ہے کہ دیت تین سال میں لی جائے گی، ہر سال دیت کا تہائی حصہ لیا جائے گا، ٥ - اور ان کا خیال ہے کہ دیت خطا عصبہ پر ہے، ٦ - بعض لوگوں کے نزدیک عصبہ وہ ہیں جو باپ کی جانب سے آدمی کے قرابت دار ہوں، مالک اور شافعی کا یہی قول ہے، ٧ - بعض لوگوں کا کہنا ہے کہ عصبہ میں سے جو مرد ہیں انہی پر دیت ہے، عورتوں اور بچوں پر نہیں، ان میں سے ہر آدمی کو چوتھائی دینار کا مکلف بنایا جائے گا، ٨ - کچھ لوگ کہتے ہیں : آدھے دینار کا مکلف بنایا جائے گا، ٩ - اگر دیت مکمل ہوجائے گی تو ٹھیک ہے ورنہ سب سے قریبی قبیلہ کو دیکھا جائے گا اور ان کو اس کا مکلف بنایا جائے گا۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الدیات ١٨ (٤٥٤٥) ، سنن النسائی/القسامة ٣٤ (٤٨٠٦) ، سنن ابن ماجہ/الدیات ٦ (٢٦٣١) ، (تحفة الأشراف : ١٩٨) ، و مسند احمد (١/٤٥٠) (ضعیف) (سند میں حجاج بن ارطاة مدلس اور کثیر الوہم ہیں اور روایت عنعنہ سے ہے، نیز خشف بن مالک کی ثقاہت میں بھی بہت کلام ہے، ملاحظہ ہو : الضعیفة رقم : ٤٠٢٠ )
وضاحت : ١ ؎ : قتل کی تین قسمیں ہیں : ١ - قتل عمد : یعنی جان بوجھ کر ایسے ہتھیار کا استعمال کرنا جن سے عام طور سے قتل واقع ہوتا ہے ، اس میں قاتل سے قصاص لیا جاتا ہے ، ٢ - قتل خطا ، : یعنی غلطی سے قتل کا ہوجانا ، اوپر کی حدیث میں اسی قتل کی دیت بیان ہوئی ہے۔ ٣ - قتل شبہ عمد : یہ وہ قتل ہے جس میں ایسی چیزوں کا استعمال ہوتا ہے جن سے عام طور سے قتل واقع نہیں ہوتا جیسے لاٹھی اور کوڑا وغیرہ ، اس میں دیت مغلظہ لی جاتی ہے اور یہ سو اونٹ ہے ان میں چالیس حاملہ اونٹنیاں ہوں گی۔ ٢ ؎ : کسی نفس کے قتل یا جسم کے کسی عضو کے ضائع کرنے کے بدلے میں جو مال دیا جاتا ہے اسے دیت کہتے ہیں۔ ٣ ؎ : وہ اونٹنی جو ایک سال کی ہوچکی ہو ٤ ؎ ، وہ اونٹنی جو دو سال کی ہوچکی ہو۔ ٥ ؎؎ وہ اونٹ جو چار سال کی ہوچکا ہو ٦ ؎؎ ، وہ اونٹ جو تین سال کا ہوچکا ہو۔
قال الشيخ الألباني : ضعيف، ابن ماجة (2631)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 1386
Khashf ibn Maalik(RA) reported that he heard Sayyidina Ibn Mas’ud(RA) say that in a case of killing by mistake. Allah’s Messenger ( had passed judgement that blood-money should be paid thus: twenty she-camells and twenty he-camels in their second year, twenty she-camels in their third year, twenty she-camels in their fifth year and twenty she-camels in their fourth year.[Abu Dawud 4545, Nisai 4816, Ibn e Majah 2531]
Top