سنن الترمذی - فتنوں کا بیان - 2265
حدیث نمبر: 2158
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ عَبْدَةَ الضَّبِّيُّ، حَدَّثَنَا حَمَّادُ بْنُ زَيْدٍ، عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ، عَنْ أَبِي أُمَامَةَ بْنِ سَهْلِ بْنِ حُنَيْفٍ، أَنّعُثْمَانَ بْنَ عَفَّانَ أَشْرَفَ يَوْمَ الدَّارِ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ لَا يَحِلُّ دَمُ امْرِئٍ مُسْلِمٍ إِلَّا بِإِحْدَى ثَلَاثٍ:‏‏‏‏ زِنًا بَعْدَ إِحْصَانٍ، ‏‏‏‏‏‏أَوِ ارْتِدَادٍ بَعْدَ إِسْلَامٍ، ‏‏‏‏‏‏أَوْ قَتْلِ نَفْسٍ بِغَيْرِ حَقٍّ، ‏‏‏‏‏‏فَقُتِلَ بِهِ ، ‏‏‏‏‏‏فَوَاللَّهِ مَا زَنَيْتُ فِي جَاهِلِيَّةٍ وَلَا فِي إِسْلَامٍ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا ارْتَدَدْتُ مُنْذُ بَايَعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏وَلَا قَتَلْتُ النَّفْسَ الَّتِي حَرَّمَ اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏فَبِمَ تَقْتُلُونَنِي ؟، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ وَفِي الْبَابِ عَنِ ابْنِ مَسْعُودٍ، ‏‏‏‏‏‏وَعَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَابْنِ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏وَهَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَرَوَاهُ حَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ فَرَفَعَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَرَوَى يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ الْقَطَّانُ، ‏‏‏‏‏‏وَغَيْرُ وَاحِدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ يَحْيَى بْنِ سَعِيدٍ هَذَا الْحَدِيثَ فَأَوْقَفُوهُ وَلَمْ يَرْفَعُوهُ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ رُوِيَ هَذَا الْحَدِيثُ مِنْ غَيْرِ وَجْهٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عُثْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏عَنِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ مَرْفُوعًا.
ابوامامہ بن سہل بن حنیف (رض) جب باغیوں نے عثمان بن عفان (رض) کے گھر کا محاصرہ کر رکھا تھا تو انہوں نے اپنے گھر کی چھت پر آ کر کہا : میں تمہیں اللہ تعالیٰ کی قسم دیتا ہوں، کیا تم نہیں جانتے ہو کہ رسول اللہ نے فرمایا : تین صورتوں کے سوا کسی مسلمان کا خون حلال نہیں : شادی کے بعد زنا کرنا، یا اسلام لانے کے بعد مرتد ہوجانا، یا کسی کو ناحق قتل کرنا جس کے بدلے میں قاتل کو قتل کیا جائے، اللہ کی قسم ! میں نے نہ جاہلیت میں زنا کیا ہے نہ اسلام میں، نہ رسول اللہ سے بیعت کرنے کے بعد میں مرتد ہوا ہوں اور نہ ہی اللہ کے حرام کردہ کسی نفس کا قاتل ہوں، پھر (آخر) تم لوگ کس وجہ سے مجھے قتل کر رہے ہو ؟۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - یہ حدیث حسن ہے، ٢ - اسے حماد بن سلمہ نے یحییٰ بن سعید کے واسطہ سے مرفوعاً روایت کیا ہے، اور یحییٰ بن سعید قطان اور دوسرے کئی لوگوں نے یحییٰ بن سعید سے یہ حدیث روایت کی ہے، لیکن یہ موقوف ہے نہ کہ مرفوع، ٣ - اس باب میں ابن مسعود، عائشہ اور ابن عباس (رض) سے بھی احادیث آئی ہیں، ٤ - اور یہ حدیث عثمان کے واسطہ سے نبی اکرم سے کئی دیگر سندوں بھی سے مرفوعاً مروی ہے۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الدیات ٣ (٤٥٠٢) ، سنن النسائی/المحاربة ٥ (٤٠٢٤) ، سنن ابن ماجہ/الحدود ١ (٢٥٣٣) (تحفة الأشراف : ٩٧٨٢) ، و مسند احمد (١/٦١، ٦٢، ٦٥، ٧٠) (صحیح )
قال الشيخ الألباني : صحيح، ابن ماجة (2533 )
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 2158
Abu Umamah ibn Sahl ibn Hunayf reported that Sayyidina Uthman ibn Affan (who was locked up in his home for fear of those who wrought mischief) climbed up the roof top one day. He asked the besiegers, “I adjure you by Allah, do you know that Allah’s Messenger ﷺ said: The blood of a Muslim is forbidden except for one of three crimes. (They are :) adultery committed by a married person, apostatizing after joining Islam, slaying someone without just cause. He is killed for these things. By Allah, I have not committed adultery either in jahilyah or after Islam. I have not apostatized since having sworn allegiance to Allah’s Messenger ﷺ . And, I have not slain any soul who Allah has made sacred. Then why do you slay me? [Muslim 1672] --------------------------------------------------------------------------------
Top