سنن الترمذی - فیصلوں کا بیان - 1345
حدیث نمبر: 1322
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَبْدِ الْأَعْلَى الصَّنْعَانِيُّ، حَدَّثَنَا الْمُعْتَمِرُ بْنُ سُلَيْمَانَ، قَال:‏‏‏‏ سَمِعْتُ عَبْدَ الْمَلِكِ يُحَدِّثُ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ مَوْهَبٍ، أَنَّ عُثْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ لِابْنِ عُمَرَ:‏‏‏‏ اذْهَبْ، ‏‏‏‏‏‏فَاقْضِ بَيْنَ النَّاسِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَوَ تُعَافِينِي يَا أَمِيرَ الْمُؤْمِنِينَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَمَا تَكْرَهُ مِنْ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ كَانَ أَبُوكَ، ‏‏‏‏‏‏يَقْضِي، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنِّي سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ مَنْ كَانَ قَاضِيًا، ‏‏‏‏‏‏فَقَضَى بِالْعَدْلِ فَبِالْحَرِيِّ، ‏‏‏‏‏‏أَنْ يَنْقَلِبَ مِنْهُ كَفَافًا، ‏‏‏‏‏‏فَمَا أَرْجُو بَعْدَ ذَلِكَ ، ‏‏‏‏‏‏وَفِي الْحَدِيثِ قِصَّةٌ. وَفِي الْبَاب:‏‏‏‏ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ. قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ حَدِيثُ ابْنِ عُمَرَ حَدِيثٌ غَرِيبٌ، ‏‏‏‏‏‏وَلَيْسَ إِسْنَادُهُ عِنْدِي بِمُتَّصِلٍ، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدُ الْمَلِكِ الَّذِي رَوَى عَنْهُ الْمُعْتَمِرُ هَذَا هُوَ عَبْدُ الْمَلِكِ بْنُ أَبِي جَمِيلَةَ.
عبداللہ بن موہب کہتے ہیں کہ عثمان (رض) نے ابن عمر (رض) سے کہا : جاؤ (قاضی بن کر) لوگوں کے درمیان فیصلے کرو، انہوں نے کہا : امیر المؤمنین ! کیا آپ مجھے معاف رکھیں گے، عثمان (رض) نے کہا : تم اسے کیوں برا سمجھتے ہو، تمہارے باپ تو فیصلے کیا کرتے تھے ؟ اس پر انہوں نے کہا : میں نے رسول اللہ کو فرماتے سنا ہے : جو قاضی ہوا اور اس نے عدل انصاف کے ساتھ فیصلے کئے تو لائق ہے کہ وہ اس سے برابر سرابر چھوٹ جائے (یعنی نہ ثواب کا مستحق ہو نہ عقاب کا) ، اس کے بعد میں (بھلائی کی) کیا امید رکھوں، حدیث میں ایک قصہ بھی ہے۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - ابن عمر (رض) کی حدیث غریب ہے، میرے نزدیک اس کی سند متصل نہیں ہے۔ اور عبدالملک جس سے معتمر نے اسے روایت کیا ہے عبدالملک بن ابی جمیلہ ہیں، ٢ - اس باب میں ابوہریرہ (رض) سے بھی روایت ہے۔
تخریج دارالدعوہ : تفرد بہ المؤلف (تحفة الأشراف : ٧٢٨٨) (ضعیف) (سند میں عبد الملک بن ابی جمیلہ مجہول ہیں )
قال الشيخ الألباني : ضعيف تخريج المشکاة (3743 / التحقيق الثاني) ، التعليق الرغيب (2 / 132) ، التعليق علی الأحاديث المختارة رقم (348 و 349) // ضعيف الجامع الصغير (5799) //
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 1322
Abdullah ibn Mawhib reported that Sayyidina Uthman (RA) said to Sayyidina Ibn Umar (RA) , ‘Go and judge between people.” He said, Will you not excuse me from it, Amir ui-Mu mineen?’ He said, “Why do you detest it while your father used to judge?” He said, “I have heard Allah’s Messenger say, He who is a judge and judges with justice, then it is hoped that he will just manage to get over (on the Day resurrection), So shall I entertain hope even after that?” There is a in story this hadith.
Top