سنن الترمذی - گواہیوں کا بیان - 2413
حدیث نمبر: 2295
حَدَّثَنَا الْأَنْصَارِيُّ، حَدَّثَنَا مَعْنٌ، حَدَّثَنَا مَالِكٌ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ أَبِي بَكْرِ بْنِ مُحَمَّدِ بْنِ عَمْرِو بْنِ حَزْمٍ، عَنْ أَبِيهِ، عَنْ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ عَمْرِو بْنِ عُثْمَانَ، عَنْ أَبِي عَمْرَةَ الْأَنْصَارِيِّ، عَنْ زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ الْجُهَنِيِّ، أَنّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَالَ:‏‏‏‏ أَلَا أُخْبِرُكُمْ بِخَيْرِ الشُّهَدَاءِ ؟ الَّذِي يَأْتِي بِالشَّهَادَةِ قَبْلَ أَنْ يُسْأَلَهَا .
حدیث نمبر: 2296
حَدَّثَنَا أَحْمَدُ بْنُ الْحَسَنِ، حَدَّثَنَا عَبْدُ اللَّهِ بْنُ مَسْلَمَةَ، عَنْ مَالِكٍ نَحْوَهُ، ‏‏‏‏‏‏وَقَالَ ابْنُ أَبِي عَمْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَأَكْثَرُ النَّاسِ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُونَ:‏‏‏‏ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ أَبِي عَمْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَاخْتَلَفُوا عَلَى مَالِكٍ فِي رِوَايَةِ هَذَا الْحَدِيثِ، ‏‏‏‏‏‏فَرَوَى بَعْضُهُمْ عَنْ أَبِي عَمْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَرَوَى بَعْضُهُمْ عَنْ ابْنِ أَبِي عَمْرَةَ وَهُوَ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ أَبِي عَمْرَةَ الْأَنْصَارِيُّ، ‏‏‏‏‏‏وَهَذَا أَصَحُّ لِأَنَّهُ قَدْ رُوِيَ مِنْ غَيْرِ حَدِيثِ مَالِكٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ عَبْدِ الرَّحْمَنِ بْنِ أَبِي عَمْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ رُوِيَ عَنِ ابْنِ أَبِي عَمْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ غَيْرُ هَذَا الْحَدِيثِ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ حَدِيثٌ صَحِيحٌ أَيْضًا، ‏‏‏‏‏‏وَأَبُو عَمْرَةَ مَوْلَى زَيْدِ بْنِ خَالِدٍ الْجُهَنِيِّ، ‏‏‏‏‏‏وَلَهُ حَدِيثُ الْغُلُولِ، ‏‏‏‏‏‏وَأَكْثَرُ النَّاسِ، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُونَ:‏‏‏‏ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ أَبِي عَمْرَةَ.
زید بن خالد جہنی (رض) سے روایت ہے کہ رسول اللہ نے فرمایا : کیا میں تمہیں سب سے اچھے گواہ کے بارے میں نہ بتادوں ؟ سب سے اچھا گواہ وہ آدمی ہے جو گواہی طلب کیے جانے سے پہلے گواہی دے ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : صحیح مسلم/الأقضیة ٩ (١٧١٩) ، سنن ابی داود/ الأقضیة ١٣ (٣٥٩٦) ، سنن ابن ماجہ/الأحکام ٢٨ (٢٣٦٤) (تحفة الأشراف : ٣٧٥٤) ، وط/الأقضیة ٢ (٣) (صحیح )
وضاحت : ١ ؎ : اس گواہی کی صورت یہ ہے کہ کسی شخص کا کوئی ایسا معاملہ درپیش ہے جس میں کسی گواہ کی ضرورت ہے اور اس کے علم کے مطابق اس معاملہ کا کوئی گواہ نہیں ہے ، پھر اچانک ایک دوسرا شخص آئے اور خود سے اپنے آپ کو پیش کرے اور اس معاملہ کی گواہی دے تو اس حدیث میں ایسے ہی گواہ کو سب سے بہتر گواہ کہا گیا ہے ، معلوم ہوا کہ کسی کے پاس اگر کوئی شہادت موجود ہے تو اسے قاضی کے سامنے حاضر ہو کر معاملہ کے تصفیہ کی خاطر گواہی دینی چاہیئے اسے اس کے لیے طلب کیا گیا ہو یا نہ طلب کیا گیا ہو۔
قال الشيخ الألباني : صحيح
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 2295
اس سند سے بھی اسی جیسی حدیث مروی ہے۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - یہ حدیث حسن ہے، ٢ - اکثر لوگوں نے اپنی روایت میں عبدالرحمٰن بن ابی عمرہ کہا ہے۔ ٣ - اس حدیث کی روایت کرنے میں مالک کے شاگردوں کا اختلاف ہے، بعض راویوں نے اسے ابی عمرہ سے روایت کیا ہے، اور بعض نے ابن ابی عمرہ سے، ان کا نام عبدالرحمٰن بن ابی عمرہ انصاری ہے، ابن ابی عمرہ زیادہ صحیح ہے، کیونکہ مالک کے سوا دوسرے راویوں نے «عن عبدالرحمٰن بن أبي عمرة عن زيد بن خالد» کہا ہے «عن ابن أبي عمرة عن زيد بن خالد» کی سند سے اس کے علاوہ دوسری حدیث بھی مروی ہے، اور وہ صحیح حدیث ہے، ابو عمرہ زید بن خالد جہنی کے آزاد کردہ غلام تھے، اور ابو عمرہ کے واسطہ سے خالد سے حدیث غلول مروی ہے، اکثر لوگ عبدالرحمٰن بن ابی عمرہ ہی کہتے ہیں ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : انظر ماقبلہ (صحیح )
وضاحت : ١ ؎ : مؤلف کے سوا ہر ایک کے یہاں «ابن أبي عمرة» ہی ہے۔
قال الشيخ الألباني : **
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 2296
Sayyidina Zayd ibn Kalid Juhanni (RA) reported that Allah’s Messenger ﷺ said, “Shall I not inform you of the best of witnesses ? They offer testimony before they are asked”. [Ahmed 17044 Muslim 1719 Abu Dawud 3569 Ibn Majah 2364]Ahmad ibn Hasan reproted from Abdullah ibn Maslamah, from Malik the same hadith.
Top