سنن الترمذی - نیکی و صلہ رحمی کا بیان - 1979
حدیث نمبر: 1897
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ بَشَّارٍ، أَخْبَرَنَا يَحْيَى بْنُ سَعِيدٍ، أَخْبَرَنَا بَهْزُ بْنُ حَكِيمٍ، حَدَّثَنِي أَبِي، عَنْ جَدِّي، قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏مَنْ أَبَرُّ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أُمَّكَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أُمَّكَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ أُمَّكَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ قُلْتُ:‏‏‏‏ ثُمَّ مَنْ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ ثُمَّ أَبَاكَ، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ الْأَقْرَبَ، ‏‏‏‏‏‏فَالْأَقْرَبَ ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَفِي الْبَابِ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَعَبْدِ اللَّهِ بْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏وَعَائِشَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَأَبِي الدَّرْدَاءِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ وَبَهْزُ بْنُ حَكِيمٍ هُوَ أَبْنُ مُعَاوِيَةَ بْنُ حَيْدَةَ الْقُشَيْرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏وَهَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ تَكَلَّمَ شُعْبَةُ فِي بَهْزِ بْنِ حَكِيمٍ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ ثِقَةٌ عِنْدَ أَهْلِ الْحَدِيثِ، ‏‏‏‏‏‏وَرَوَى عَنْهُ مَعْمَرٌ، ‏‏‏‏‏‏وَالثَّوْرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏وَحَمَّادُ بْنُ سَلَمَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَغَيْرُ وَاحِدٍ مِنَ الْأَئِمَّةِ.
معاویہ بن حیدہ قشیری (رض) کہتے ہیں کہ میں نے عرض کیا اللہ کے رسول ! میں کس کے ساتھ نیک سلوک اور صلہ رحمی کروں ؟ آپ نے فرمایا : اپنی ماں کے ساتھ ، میں نے عرض کیا : پھر کس کے ساتھ ؟ فرمایا : اپنی ماں کے ساتھ ، میں نے عرض کیا : پھر کس کے ساتھ ؟ فرمایا : اپنی ماں کے ساتھ ، میں نے عرض کیا : پھر کس کے ساتھ ؟ فرمایا : پھر اپنے باپ کے ساتھ، پھر رشتہ داروں کے ساتھ پھر سب سے زیادہ قریبی رشتہ دار پھر اس کے بعد کا، درجہ بدرجہ ١ ؎۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - یہ حدیث حسن ہے، شعبہ نے بہز بن حکیم کے بارے میں کلام کیا ہے، محدثین کے نزدیک وہ ثقہ ہیں، ان سے معمر، ثوری، حماد بن سلمہ اور کئی ائمہ حدیث نے روایت کی ہے، ٢ - اس باب میں ابوہریرہ، عبداللہ بن عمرو، عائشہ اور ابو الدرداء (رض) سے بھی احادیث آئی ہیں۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الأدب ١٢٩ (٥١٣٩) ، (تحفة الأشراف : ١١٨٨٣) ، و مسند احمد (٥/٣، ٥) (حسن )
وضاحت : ١ ؎ : ماں کو تین مشکل حالات سے گزرنا پڑتا ہے : ایک مرحلہ وہ ہوتا ہے جب نو ماہ تک بچہ کو پیٹ میں رکھ کر مشقت و تکلیف برداشت کرتی ہے ، دوسرا مرحلہ وہ ہوتا ہے جب بچہ جننے کا وقت آتا ہے ، وضع حمل کے وقت کن مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے یہ ماں ہی کو معلوم ہے ، تیسرا مرحلہ دودھ پلانے کا ہے ، یہی وجہ ہے کہ ماں کو قرابت داروں میں نیکی اور صلہ رحمی کے لیے سب سے افضل اور سب سے مستحق قرار دیا گیا ہے۔
قال الشيخ الألباني : حسن، المشکاة (4929)
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 1897
Bahz ibn Hakim reported on the authority of his father and his grandfather that he asked, “O Messenger of Allah! ﷺ who is most deserving (of kind treatment)?” He said, “Your mother.” He asked, ‘Who next?” He said, “Your mother.” He asked, “And after her?” He (again) said, “Your mother.” He asked, “And next?” He said, “Your father. Then, the nearest, followed by the nearest.”[Bukhari 5971, Muslim 2548]
Top