سنن ابنِ ماجہ - اذان کا بیان - 706
حدیث نمبر: 706
حَدَّثَنَا أَبُو عُبَيْدٍ مُحَمَّدُ بْنُ عُبَيْدِ بْنِ مَيْمُونٍ الْمَدَنِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ سَلَمَةَ الْحَرَّانِيُّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ إِسْحَاق، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ إِبْرَاهِيمَ التَّيْمِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ مُحَمَّدِ بْنِ عَبْدِ اللَّهِ بْنِ زَيْدٍ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِيهِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ قَدْ هَمَّ بِالْبُوقِ وَأَمَرَ بِالنَّاقُوسِ فَنُحِتَ، ‏‏‏‏‏‏فَأُرِيَ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ زَيْدٍ فِي الْمَنَامِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ رَأَيْتُ رَجُلًا عَلَيْهِ ثَوْبَانِ أَخْضَرَانِ، ‏‏‏‏‏‏يَحْمِلُ نَاقُوسًا، ‏‏‏‏‏‏فَقُلْتُ لَهُ:‏‏‏‏ يَا عَبْدَ اللَّهِ تَبِيعُ النَّاقُوسَ؟، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَمَا تَصْنَعُ بِهِ؟، ‏‏‏‏‏‏قُلْتُ:‏‏‏‏ أُنَادِي بِهِ إِلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ أَفَلَا أَدُلُّكَ عَلَى خَيْرٍ مِنْ ذَلِكَ؟ قُلْتُ:‏‏‏‏ وَمَا هُوَ؟ قَالَ:‏‏‏‏ تَقُول:‏‏‏‏ اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَشْهَدُ أَنَّ مُحَمَّدًا رَسُولُ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الصَّلَاةِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏حَيَّ عَلَى الْفَلَاحِ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُ أَكْبَرُ، ‏‏‏‏‏‏لَا إِلَهَ إِلَّا اللَّهُ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَخَرَجَ عَبْدُ اللَّهِ بْنُ زَيْدٍ حَتَّى أَتَى رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ فَأَخْبَرَهُ بِمَا رَأَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ رَأَيْتُ رَجُلًا عَلَيْهِ ثَوْبَانِ أَخْضَرَانِ يَحْمِلُ نَاقُوسًا، ‏‏‏‏‏‏فَقَصَّ عَلَيْهِ الْخَبَرَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ إِنَّ صَاحِبَكُمْ قَدْ رَأَى رُؤْيَا، ‏‏‏‏‏‏فَاخْرُجْ مَعَ بِلَالٍ إِلَى الْمَسْجِدِ فَأَلْقِهَا عَلَيْهِ وَلْيُنَادِ بِلَالٌ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنَّهُ أَنْدَى صَوْتًا مِنْكَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَخَرَجْتُ مَعَ بِلَالٍ إِلَى الْمَسْجِدِ فَجَعَلْتُ أُلْقِيهَا عَلَيْهِ وَهُوَ يُنَادِي بِهَا، ‏‏‏‏‏‏فَسَمِعَ عُمَرُ بْنُ الْخَطَّابِ بِالصَّوْتِ فَخَرَجَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ:‏‏‏‏ يَا رَسُولَ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏وَاللَّهِ لَقَدْ رَأَيْتُ مِثْلَ الَّذِي رَأَى، ‏‏‏‏‏‏قَالَ أَبُو عُبَيْدٍ فَأَخْبَرَنِي، ‏‏‏‏‏‏أَبُو بَكْرٍ الْحَكَمِيُّ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَبْدَ اللَّهِ بْنَ زَيْدٍ الْأَنْصَارِيَّ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ فِي ذَلِكَ:‏‏‏‏ أَحْمَدُ اللَّهَ ذَا الْجَلَالِ وَذَا الْإِكْـ ـرَامِ حَمْدًا عَلَى الْأَذَانِ كَثِيرَا إِذْ أَتَانِي بِهِ الْبَشِيرُ مِنَ اللَّـ ـهِ فَأَكْرِمْ بِهِ لَدَيَّ بَشِيرَا فِي لَيَالٍ وَالَى بِهِنَّ ثَلَاثٍ كُلَّمَا جَاءَ زَادَنِي تَوْقِيرَا.
عبداللہ بن زید (عبداللہ بن زید بن عبدربہ) (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ ﷺ نے بگل بجوانے کا ارادہ کیا تھا (تاکہ لوگ نماز کے لیے جمع ہوجائیں، لیکن یہود سے مشابہت کی وجہ سے اسے چھوڑ دیا) ، پھر ناقوس تیار کئے جانے کا حکم دیا، وہ تراشا گیا، (لیکن اسے بھی نصاری سے مشابہت کی وجہ سے چھوڑ دیا) ، اسی اثناء میں عبداللہ بن زید (رض) کو خواب دکھایا گیا، انہوں نے کہا کہ میں نے خواب میں دو سبز کپڑے پہنے ایک آدمی کو دیکھا جو اپنے ساتھ ناقوس لیے ہوئے تھا، میں نے اس سے کہا : اللہ کے بندے ! کیا تو یہ ناقوس بیچے گا ؟ اس شخص نے کہا : تم اس کا کیا کرو گے ؟ میں نے کہا : میں اسے بجا کر لوگوں کو نماز کے لیے بلاؤں گا، اس شخص نے کہا : کیا میں تمہیں اس سے بہتر چیز نہ بتادوں ؟ میں نے پوچھا : وہ بہتر چیز کیا ہے ؟ اس نے کہا : تم یہ کلمات کہو «الله أكبر الله أكبر الله أكبر الله أكبر أشهد أن لا إله إلا الله أشهد أن لا إله إلا الله أشهد أن محمدا رسول الله أشهد أن محمدا رسول الله حي على الصلاة حي على الصلاة حي على الفلاح حي على الفلاح . الله أكبر الله أكبر لا إله إلا الله» اللہ سب سے بڑا ہے، اللہ سب سے بڑا ہے، اللہ سب سے بڑا ہے، اللہ سب سے بڑا ہے، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود برحق نہیں، میں گواہی دیتا ہوں کہ اللہ کے سوا کوئی معبود برحق نہیں، میں گواہی دیتا ہوں کہ محمد ﷺ اللہ کے رسول ہیں، میں گواہی دیتا ہوں کہ محمد ﷺ اللہ کے رسول ہیں، آؤ نماز کے لیے، آؤ نماز کے لیے، آؤ کامیابی کی طرف، آؤ کامیابی کی طرف، اللہ سب سے بڑا ہے، اللہ سب سے بڑا ہے، اللہ کے سوا کوئی معبود برحق نہیں ۔ راوی کہتے ہیں : عبداللہ بن زید نکلے اور رسول اللہ ﷺ کے پاس آ کر پورا خواب بیان کیا : عرض کیا : اللہ کے رسول ! میں نے ایک آدمی کو دو سبز کپڑے پہنے دیکھا، جو ناقوس لیے ہوئے تھا، اور آپ ﷺ سے پورا واقعہ بیان کیا، تو رسول اللہ ﷺ نے صحابہ کرام رضی اللہ عنہم سے فرمایا : تمہارے ساتھی نے ایک خواب دیکھا ہے ، عبداللہ بن زید (رض) سے فرمایا : تم بلال کے ساتھ مسجد جاؤ، اور انہیں اذان کے کلمات بتاتے جاؤ، اور وہ اذان دیتے جائیں، کیونکہ ان کی آواز تم سے بلند تر ہے ، عبداللہ بن زید (رض) کہتے ہیں : میں بلال (رض) کے ساتھ مسجد گیا، اور انہیں اذان کے کلمات بتاتا گیا اور وہ انہیں بلند آواز سے پکارتے گئے، عبداللہ بن زید (رض) کہتے ہیں : تو عمر بن خطاب (رض) نے جوں ہی یہ آواز سنی فوراً گھر سے نکلے، اور آ کر عرض کیا : اللہ کے رسول ! میں نے بھی یہی خواب دیکھا ہے جو عبداللہ بن زید نے دیکھا ہے۔ ابوعبید کہتے ہیں : مجھے ابوبکر حکمی نے خبر دی کہ عبداللہ بن زید انصاری (رض) نے اس بارے میں چند اشعار کہے ہیں جن کا ترجمہ یہ ہے : میں بزرگ و برتر اللہ کی خوب خوب تعریف کرتا ہوں، جس نے اذان سکھائی، جب اللہ کی جانب سے میرے پاس اذان کی خوشخبری دینے والا (فرشتہ) آیا، وہ خوشخبری دینے والا میرے نزدیک کیا ہی باعزت تھا، مسلسل تین رات تک میرے پاس آتا رہا، جب بھی وہ میرے پاس آیا اس نے میری عزت بڑھائی ١ ؎۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/الصلاة ٢٨ (٤٩٩) ، سنن الترمذی/الصلاة ٢٥ (١٨٩) ، (تحفة الأشراف : ٥٣٠٩) ، وقد أخرجہ : صحیح مسلم/الصلاة ٣ (٣٧٩) ، مسند احمد (٤/٤٢، ٤٣) ، سنن الدارمی/الصلاة ٣ (١٢٢٤) (حسن )
وضاحت : ١ ؎ : دوسری روایت میں ہے کہ نبی اکرم نے فرمایا : یہ خواب سچا ہے، انشاء اللہ تعالیٰ اور عمر (رض) کے دیکھنے سے اس کی سچائی کا اور زیادہ یقین ہوا، اس پر بھی نبی اکرم نے صرف خواب پر حکم نہیں دیا، بلکہ اس کے بعد آپ پر وحی کی گئی کیونکہ دین کے احکام خواب سے ثابت نہیں ہوسکتے، مگر انبیاء کے خواب وحی میں داخل ہیں، تو عبداللہ بن زید (رض) نے جس شخص کو خواب میں دیکھا وہ اللہ تعالیٰ کا فرشتہ تھا، اور صرف وحی پر جو اکتفا نہیں ہوئی، اور اذان کئی شخصوں کو خواب میں دکھلائی گئی تو اس میں بھی یہ راز تھا کہ نبی اکرم کی سچائی اور عظمت کا زیادہ ثبوت ہو۔
It was narrated from Muhammad bin ‘Abdulláh bin Zaid that his father said that the Messenger of Allah ﷺ was thinking of a horn, and he commanded that a bell be made and it was done. Then ‘ Abdullah bin Zaid (RA) had a dream. He said: “I saw a man wearing two green garments, carrying a bell. I said to him, ‘O slave of Allah, will you sell the bell?’ He said; ‘What will you do with it?’ I said, ‘I will call (the people) to prayer.’ He said, ‘Shall I not tell you of something better than that?’ I said, ‘What is it?’ He said, ‘Say: Allâhu Akbar Allahu Akbar, Allhu Akbar Allahu Akbar; Ash-hadu an Ia ilaha illallah, Ash-hadu an Ia ilaha illaIIah; Ash- hadu anna Muhammadan RasuluIIah Ash-hadu anna Muhammadan Rasulullah; Hayya ‘ala as-salah, Hayya ‘alas-salah; Hayya ‘alal-falah, Hayya ‘alal-falah; Allahu Akbar Allahu Akbar; La ilaha illallah (Allah is the Most Great, Allah is the Most Great, Allah is the Most Great, Allah is the Most Great; I bear witness that none has the right to be worshipped but Allah, I bear witness that none has the right to be worshipped but Allah; I bear witness that Muhammad is the Messenger of Allah, I bear witness that Muhammad is the Messenger of Allah; Come to the prayer, Come to the prayer; come to the prosperity, Come to the prosperity; Allah is the Most Great, Allah is the Most Great; none has the right to be Worshipped but Allah).”‘Abdullâh bin Zaid went out and came to the Messenger of Allah ﷺ , and told him what he had seen. He said, ‘O Messenger of Allah, I saw a mali wearing two green garments carrying a bell,” and he told him the story. The Messenger of Allah ﷺ said, “Your companion has had a dream. Go out with BiIâl to the Masjid and teach it to him, for he has a louder voice than you.” I (‘Abdullah) went out with Bilal (RA) to the Masjid, and I started teaching him the words and he was calling them out. ‘Umar bin Al-Khattâb heard the voice arid came out saying: “O Messenger of Allah! ﷺ By Allah, I saw the same (dream) as him.” (Hasan) Abu ‘Ubaid said: “ Abu Bakr (RA) Al-Hakami told me that ‘Abdullâh bin Zaid Al-Ansâri said concerning that: I praise Allah, the Possessor of majesty and honor, A great deal of praise for the Adhan. Since the news of it came to me from Allah, So due to it, I was honored by the information. During the three nights. Each of which increased me in honor.’”
Top