سنن الترمذی - جہاد کا بیان - 1605
حدیث نمبر: 1548
حَدَّثَنَا حَدَّثَنَا قُتَيْبَةُ، حَدَّثَنَا أَبُو عَوَانَةَ، عَنْ عَطَاءِ بْنِ السَّائِبِ، عَنْ أَبِي الْبَخْتَرِيِّ أَنَّ جَيْشًا مِنْ جُيُوشِ الْمُسْلِمِينَ كَانَ أَمِيرَهُمْ سَلْمَانُ الْفَارِسِيُّ حَاصَرُوا قَصْرًا مِنْ قُصُورِ فَارِسَ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالُوا:‏‏‏‏ يَا أَبَا عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَلَا نَنْهَدُ إِلَيْهِمْ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ دَعُونِي أَدْعُهُمْ كَمَا سَمِعْتُ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ يَدْعُوهُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَأَتَاهُمْ سَلْمَانُ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالَ لَهُمْ:‏‏‏‏ إِنَّمَا أَنَا رَجُلٌ مِنْكُمْ فَارِسِيٌّ، ‏‏‏‏‏‏تَرَوْنَ الْعَرَبَ يُطِيعُونَنِي، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ أَسْلَمْتُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَلَكُمْ مِثْلُ الَّذِي لَنَا وَعَلَيْكُمْ مِثْلُ الَّذِي عَلَيْنَا، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ أَبَيْتُمْ إِلَّا دِينَكُمْ، ‏‏‏‏‏‏تَرَكْنَاكُمْ عَلَيْهِ، ‏‏‏‏‏‏وَأَعْطُونَا الْجِزْيَةَ عَنْ يَدٍ وَأَنْتُمْ صَاغِرُونَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَرَطَنَ إِلَيْهِمْ بِالْفَارِسِيَّةِ:‏‏‏‏ وَأَنْتُمْ غَيْرُ مَحْمُودِينَ، ‏‏‏‏‏‏وَإِنْ أَبَيْتُمْ، ‏‏‏‏‏‏نَابَذْنَاكُمْ عَلَى سَوَاءٍ، ‏‏‏‏‏‏قَالُوا:‏‏‏‏ مَا نَحْنُ بِالَّذِي نُعْطِي الْجِزْيَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَلَكِنَّا نُقَاتِلُكُمْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَالُوا:‏‏‏‏ يَا أَبَا عَبْدِ اللَّهِ، ‏‏‏‏‏‏أَلَا نَنْهَدُ إِلَيْهِمْ ؟ قَالَ:‏‏‏‏ لَا، ‏‏‏‏‏‏فَدَعَاهُمْ ثَلَاثَةَ أَيَّامٍ إِلَى مِثْلِ هَذَا، ‏‏‏‏‏‏ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ انْهَدُوا إِلَيْهِمْ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ فَنَهَدْنَا إِلَيْهِمْ، ‏‏‏‏‏‏فَفَتَحْنَا ذَلِكَ الْقَصْرَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ وَفِي الْبَاب، ‏‏‏‏‏‏عَنْ بُرَيْدَةَ، ‏‏‏‏‏‏وَالنُّعْمَانِ بْنِ مُقَرِّنٍ، ‏‏‏‏‏‏وَابْنِ عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏وَابْنِ عَبَّاسٍ، ‏‏‏‏‏‏وَحَدِيثُ سَلْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏حَدِيثٌ حَسَنٌ لَا نَعْرِفُهُ إِلَّا مِنْ حَدِيثِ عَطَاءِ بْنِ السَّائِبِ، ‏‏‏‏‏‏وسَمِعْت مُحَمَّدًا، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ أَبُو الْبَخْتَرِيِّ لَمْ يُدْرِكْ سَلْمَانَ، ‏‏‏‏‏‏لِأَنَّهُ لَمْ يُدْرِكْ عَلِيًّا، ‏‏‏‏‏‏وَسَلْمَانُ مَاتَ قَبْلَ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏وَقَدْ ذَهَبَ بَعْضُ أَهْلِ الْعِلْمِ مِنْ أَصْحَابِ النَّبِيِّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَغَيْرِهِمْ إِلَى هَذَا، ‏‏‏‏‏‏وَرَأَوْا أَنْ يُدْعَوْا قَبْلَ الْقِتَالِ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ قَوْلُ إِسْحَاق بْنِ إِبْرَاهِيمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ إِنْ تُقُدِّمَ إِلَيْهِمْ فِي الدَّعْوَةِ فَحَسَنٌ، ‏‏‏‏‏‏يَكُونُ ذَلِكَ أَهْيَبَ، ‏‏‏‏‏‏وقَالَ بَعْضُ أَهْلِ الْعِلْمِ:‏‏‏‏ لَا دَعْوَةَ الْيَوْمَ، ‏‏‏‏‏‏وقَالَ أَحْمَدُ:‏‏‏‏ لَا أَعْرِفُ الْيَوْمَ أَحَدًا يُدْعَى، ‏‏‏‏‏‏وقَالَ الشَّافِعِيُّ:‏‏‏‏ لَا يُقَاتَلُ الْعَدُوُّ حَتَّى يُدْعَوْا، ‏‏‏‏‏‏إِلَّا أَنْ يَعْجَلُوا عَنْ ذَلِكَ، ‏‏‏‏‏‏فَإِنْ لَمْ يَفْعَلْ، ‏‏‏‏‏‏فَقَدْ بَلَغَتْهُمُ الدَّعْوَةُ.
ابوالبختری سعید بن فیروز سے روایت ہے کہ مسلمانوں کے ایک لشکر نے جس کے امیر سلمان فارسی تھے، فارس کے ایک قلعہ کا محاصرہ کیا، لوگوں نے کہا : ابوعبداللہ ! کیا ہم ان پر حملہ نہ کردیں ؟ ، انہوں نے کہا : مجھے چھوڑ دو میں ان کافروں کو اسلام کی دعوت اسی طرح دوں جیسا کہ میں نے رسول اللہ کو انہیں دعوت دیتے ہوئے سنا ہے ١ ؎، چناچہ سلمان فارسی (رض) ان کے پاس گئے، اور کافروں سے کہا : میں تمہاری ہی قوم فارس کا رہنے والا ایک آدمی ہوں، تم دیکھ رہے ہو عرب میری اطاعت کرتے ہیں، اگر تم اسلام قبول کرو گے تو تمہارے لیے وہی حقوق ہوں گے جو ہمارے لیے ہیں، اور تمہارے اوپر وہی ذمہ داریاں عائد ہوں گی جو ہمارے اوپر ہیں، اور اگر تم اپنے دین ہی پر قائم رہنا چاہتے ہو تو ہم اسی پر تم کو چھوڑ دیں گے، اور تم ذلیل و خوار ہو کر اپنے ہاتھ سے جزیہ ادا کرو ٢ ؎، سلمان فارسی (رض) نے اس بات کو فارسی زبان میں بھی بیان کیا، اور یہ بھی کہا : تم قابل تعریف لوگ نہیں ہو، اور اگر تم نے انکار کیا تو ہم تم سے (حق پر) جنگ کریں گے، ان لوگوں نے جواب دیا : ہم وہ نہیں ہیں کہ جزیہ دیں، بلکہ تم سے جنگ کریں گے، مسلمانوں نے کہا : ابوعبداللہ ! کیا ہم ان پر حملہ نہ کردیں ؟ انہوں نے کہا : نہیں، پھر انہوں نے تین دن تک اسی طرح ان کو اسلام کی دعوت دی، پھر مسلمانوں سے کہا : ان پر حملہ کرو، ہم لوگوں نے ان پر حملہ کیا اور اس قلعہ کو فتح کرلیا۔
امام ترمذی کہتے ہیں : ١ - سلمان فارسی (رض) کی حدیث حسن ہے، ہم اس کو صرف عطاء بن سائب ہی کی روایت سے جانتے ہیں، ٢ - میں نے محمد بن اسماعیل (امام بخاری) کو کہتے ہوئے سنا : ابوالبختری نے سلمان کو نہیں پایا ہے، اس لیے کہ انہوں نے علی کو نہیں پایا ہے، اور سلمان کی وفات علی سے پہلے ہوئی ہے، ٢ - اس باب میں بریدہ، نعمان بن مقرن، ابن عمر اور ابن عباس (رض) سے بھی احادیث آئی ہیں، ٣ - بعض اہل علم صحابہ اور دوسرے لوگوں کی یہی رائے ہے کہ قتال سے پہلے کافروں کو دعوت دی جائے گی، اسحاق بن ابراہیم بن راہویہ کا بھی یہی قول ہے کہ اگر ان کو پہلے اسلام کی دعوت دے دی جائے تو بہتر ہے، یہ ان کے لیے خوف کا باعث ہوگا، ٤ - بعض اہل علم کہتے ہیں کہ اس دور میں دعوت کی ضرورت نہیں ہے، امام احمد کہتے ہیں : میں اس زمانے میں کسی کو دعوت دئیے جانے کے لائق نہیں سمجھتا، ٥ - امام شافعی کہتے ہیں : دعوت سے پہلے دشمنوں سے جنگ نہ شروع کی جائے، ہاں اگر کفار خود جنگ میں پہل کر بیٹھیں تو اس صورت میں اگر دعوت نہ دی گئی تو کوئی حرج نہیں کیونکہ اسلام کی دعوت ان تک پہنچ چکی ہے۔
تخریج دارالدعوہ : تفرد بہ المؤلف (تحفة الأشراف : ٤٤٩٠) (ضعیف) (سند میں ابوالبختری کا لقاء ” سلمان فارسی (رض) سے نہیں ہے اس لیے سند میں انقطاع ہے، نیز ” عطاء بن السائب “ اخیر عمر میں مختلط ہوگئے تھے، لیکن قتال سے پہلے کفار کو مذکورہ تین باتوں کی پیشکش بریدہ (رض) کی حدیث سے ثابت ہے دیکھئے : الإرواء رقم ١٢٤٧ )
وضاحت : ١ ؎ : یعنی ان کافروں کو پہلے اسلام کی دعوت دی جائے اگر انہیں یہ منظور نہ ہو تو ان سے جزیہ دینے کو کہا جائے اگر یہ بھی منظور نہ ہو تو پھر حملہ کے سوا کوئی چارہ کار نہیں۔ ٢ ؎ : جزیہ ایک متعین رقم ہے جو سالانہ ایسے غیر مسلموں سے لی جاتی ہے جو کسی اسلامی مملکت میں رہائش پذیر ہوں ، اس کے بدلے میں ان کی جان و مال اور عزت و آبرو کی حفاظت کی ذمہ داری اسلامی مملکت کی ہوتی ہے۔
قال الشيخ الألباني : ضعيف، الإرواء (5 / 87) // ضعيف سنن ابن ماجة برقم (1247) //
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 1548
Abu Bakhtari narrated: A Muslim army led by Sayyidina Salman Farisi (RA) surrounded one of the Persian forts. The men said to him, “O Abu Abdullah, shall we not pounce on them?’ He said, ‘Let me invite them (to Islam). I had heard Allah’s Messenger ﷺ invite them (the enemy).” So, Salman went to them and said, “Indeed, I am a man of you, a Persian. You see the Arabs obey me. Thus, if you submit to Islam then for you is the like of what is for us and on you is that which is on us. And if you reject only to stay on your religion then we will leave at that and you will pay us the jizyah with your hands, disgraced.” The narrator said that Salman (RA) spoke in Persian and also said, “You are not praiseworthy. And if you refuse, we warn you of had things.” They said, “We are not among those who pay the jizyah, hut we will fight you.” The (Muslim) men said, “O Abu Abdullah, shall we not pounce on them?” He said, ‘No” He invited them in this way for three days and after that said, “Pounce on them. The narrator said: We poured ourselves over them and we conquered that fort.They say that this creates a greater awe among the enemy. Some other ulama say that in these days there is no need to invite them to Isam. Imam Ahmad said: I do not know if anyone needs that today. But, Imam Shafi’i said : War should not commence before giving the enemy an invitation, but if they launch an attack beforehand then there is no harm in not inviting them.--------------------------------------------------------------------------------
Top