سنن الترمذی - جہاد کا بیان - 1606
حدیث نمبر: 1549
حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ يَحْيَى الْعَدَنِيُّ الْمَكِّيُّ وَيُكْنَى بِأَبِي عَبْدِ اللَّهِ الرَّجُلِ الصَّالِحِ هُوَ ابْنُ أَبِي عُمَرَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا سُفْيَانُ بْنُ عُيَيْنَةَ، عَنْ عَبْدِ الْمَلِكِ بْنِ نَوْفَلِ بْنِ مُسَاحِقٍ، عَنْ ابْنِ عِصَامٍ الْمُزَنِيِّ، عَنْ أَبِيهِ، وَكَانَتْ لَهُ صُحْبَةٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا بَعَثَ جَيْشًا أَوْ سَرِيَّةً يَقُولُ لَهُمْ:‏‏‏‏ إِذَا رَأَيْتُمْ مَسْجِدًا، ‏‏‏‏‏‏أَوْ سَمِعْتُمْ مُؤَذِّنًا، ‏‏‏‏‏‏فَلَا تَقْتُلُوا أَحَدًا ، ‏‏‏‏‏‏هَذَا حَدِيثٌ حَسَنٌ غَرِيبٌ، ‏‏‏‏‏‏وَهُوَ حَدِيثُ ابْنِ عُيَيْنَةَ.
عصام مزنی (رض) کہتے ہیں کہ رسول اللہ جب کوئی لشکر یا سریہ بھیجتے تو ان سے فرماتے : جب تم کوئی مسجد دیکھو یا مؤذن کی آواز سنو تو کسی کو نہ مارو ١ ؎۔
امام ترمذی کہتے ہیں : یہ حدیث حسن غریب ہے، اور یہ ابن عیینہ سے آئی ہے۔
تخریج دارالدعوہ : سنن ابی داود/ الجہاد ١٠٠ (٢٦٣٥) ، (تحفة الأشراف : ٩٩٠١) (ضعیف) (سند میں ” عبد الملک بن نوفل “ لین الحدیث، اور ” ابن عصام “ مجہول راوی ہیں )
وضاحت : ١ ؎ : یعنی جب اسلام کی کوئی علامت اور نشانی نظر آ جائے تو اس وقت تک حملہ نہ کیا جائے جب تک مومن اور کافر کے درمیان فرق واضح نہ ہوجائے۔
قال الشيخ الألباني : ضعيف، ضعيف أبي داود (454) // عندنا برقم (565 / 2635) //
صحيح وضعيف سنن الترمذي الألباني : حديث نمبر 1549
Sayyidina Ibn Isam Muzani (RA) who had the honour of being a sahabi, narrated When Allah’s Messenger ﷺ sent an army anywhere, or a detachment, he would say to them, If you see a mosque or hear a mu’azzin then do not kill anyone. [Abu Dawud 2635, Ahmed 15714]
Top